بدعنوانی کیس، خرم رسول کو 7سال،5ماہ اور 15روزی قید، 8کروڑ 50لاکھ جرمانہ کی سزا

  بدعنوانی کیس، خرم رسول کو 7سال،5ماہ اور 15روزی قید، 8کروڑ 50لاکھ جرمانہ کی سزا

  

اسلام آباد (این این آئی)احتساب عدالت نے سابق وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی کے میڈیا کو آرڈی نیٹر خرم رسول کو 7سال،5 ماہ اور15 روزہ قید با مشقت،8 کروڑ50 لاکھ روپے جرمانے کی سزا سنادی۔مجرم خرم رسول کی طرف سے جرمانے کی رقم کی عدم ادائیگی پرجائیداد ضبط کرنے حکم دیا۔معزز احتساب عدالت اسلام آباد نے ملزم خرم رسول جس کیخلاف نیب نے بد عنوانی اور اختیارات کا ناجائز استعمال کر تے ہوئے جعلی کمپنیاں بنا کر عوام کے کروڑوں روپے لوٹنے اور بڑے پیمانے پر دھوکہ دہی کے الزام میں بد عنوانی کا ریفرنس دائر کیا تھاکی سماعت کرتے ہوئے نیب کے موقف کو درست قرار دیاا۔احتساب عدالت نے خرم رسول، شریک ملزم اور سگے بھائی شاہد محمود کیخلاف بدعنو ا نی کے الزامات ثابت ہونے پرنیب کے ریفرنس کا مذکورہ بالا فیصلہ سنایا۔شریک ملزم شاہد م محمود نے نیب کو پلی بارگین کی درخواست دی جس پر نیب نے ان کی طرف سے لوٹی گئی کل رقم کا تخمینہ لگایا جو ایک کروڑ 71لاکھ روپے تھی جس کو چیئرمین نیب کی منظوری کے بعدنیب نے معز ز احتساب عدالت میں حتمی منظوری کیلئے پیش کی جس پر عدالت نے ملزم کی پلی بارگین کی درخواست منظور کر لی اور ملزم شاہد محمود نے پلی بارگین کی رقم ایک کروڑ 71لاکھ روپے قومی خزانے میں جمع کروا دی۔ملزم خرم رسول مبینہ طور پر سابق وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی کے میڈیا کوآرڈی نیٹر کے طور پر فرائض سر انجام دیتے رہے ہیں۔

خرم رسول سزا

مزید :

صفحہ آخر -