طوفان سے متاثرہ ساحلی پٹی کے متاثرین کسی مسیحاکے منتظر ہیں، حافظ احمد علی 

    طوفان سے متاثرہ ساحلی پٹی کے متاثرین کسی مسیحاکے منتظر ہیں، حافظ احمد ...

  

کراچی(اسٹاف رپورٹر)جمعیت علمائے اسلام(س) کے ڈپٹی سیکرٹری حافظ احمد علی نے کہا ہے کہ حالیہ طوفان کیار میں ساحلی پٹی میں رہنے والے مکینوں کے گھروں میں ہونے والی تباہی حکمرانوں کے منہ پر طمانچہ ہے،حکومتی اہلکاروں کے دعوے عوام کے سامنے بے نقاب ہوچکے ہیں،حکومت  کی غفلت کی وجہ سے کئی انسانی جانیں بلکہ بے زبان جانوروں کی جانیں بھی خطرے میں ہیں لیکن کسی کے کان پر جوں تک نہیں رینگی۔بدھ کو جاری بیان میں حافظ احمد علی نے کہا کہ کراچی شہر جو ایک وقت روشنیوں کا شہر کہلاتا تھا لیکن آج اپنی زبوحالی کی بنا پر کسی مسیحا کا منتظر نظر آتا ہے ریاستی حکمرانوں کے موجودہونے کے باوجود پاکستان کا سب سے بڑا شہر اور ریاست کو 80 فیصد ٹیکس ادا کرنے کے باوجود بنیادی ضروریا ت کے لئے کسی مسیحا کا منتظر ہے۔کراچی کے شہریوں کو پینے کا صاف پانی تک میسر نہیں ہے،معیاری تعلیم کے لئے سرکاری سطح کا معیاری تعلیم ادارا قائم نہیں کیا جاسکا،صحت کا یہ عالم ہے کہ ہسپتالوں میں ادویات تک میسر نہیں بلکہ بعض ہسپتالوں میں عملہ تک موجود نہیں،ارباب اقتدار صرف ریاست کے حکمران بنے ہوئے ہیں اور ریاست کو اغیار کے رحم کرم پر چھوڑاہوا ہے۔اس موقع پرجمعیت علماء اسلام(س) سندھ کے امیر پیر عبدالمنان انورنقشبندی ،سیکرٹری اطلاعا ت، مفتی عابد،جمعیت علماء اسلام کراچی سرپرست اعلی ٰ پیر لیاقت علی شاہ، جنرل سیکرٹری علامہ مولاناحماد مدنی، قاری عبدالوہاب انقلابی،مفتی ظل الرحمن،مفتی محمد نقشبندی قاری لیاقت رحمانی،خواجہ احمدیار خان،حافظ ارمان چوہان،قاری سیف الرحمن،مفتی عبدالسلام شامزئی،حافظ ساجد،مولانا اقبال اللہ،مولانا ولی ہزاروی،عبدالستار بلوچ، مفتی محمد علی قمر،وصی احمد صدیقی اور دیگر رہنماؤں نے حالیہ بارشوں میں تباہ ہونے والے مکانات اور فوت ہونے والے افراد پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے انکے لئے دعائے مغفرت کی اور حکومتی اداروں کی بے حسی پر کے شدید الفاظ میں مذمت کی ہے۔

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -