مقبوضہ کشمیر اور لداخ کی آج با ضابطہ تقسیم، بھارت میں ہائی الرٹ، وادی میں فورسز کی فائرنگ سے نوجوان شہید 5مزدوروں کی لاشیں بر آمد، کرفیو برقرار

مقبوضہ کشمیر اور لداخ کی آج با ضابطہ تقسیم، بھارت میں ہائی الرٹ، وادی میں ...

  

نئی دہلی/سرینگر(این این آئی،آئی این پی،آن لائن)جموں و کشمیر اور لداخ کو بھارتی حکومت کے زیر انتظام دوعلاقوں میں آج باضابطہ طور تقسیم کیا جائے گا،مودی سرکار نے امن وامان کی صورتحال کوقابو میں رکھنے کیلئے بھارت کے ریلوے سٹیشنوں پر ہائی الرٹ جاری کردیا جبکہ سری نگر، امرتسر اور پٹھان کوٹ،اونتی پورہ،جموں اور دیگر ہوائی اڈوں پر اورنج الرٹ جاری کیا گیا۔علاوہ ازیں مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوجیوں نے ریاستی دہشت گردی کی تازہ کارروائی کے دوران ضلع اسلام آباد میں ایک نوجوان کو شہید کر دیا۔ کشمیر میڈیاسروس کے مطابق فوجیوں نے نوجوان کو ضلع کے علاقے بیج بہاڑہ میں محاصرے اور تلاشی کی کارروائی کے دوران ایک جعلی مقابلے میں شہید کر دیا۔علاوہ ازیں وادی میں نامعلوم افرادنے پانچ مزدوروں کو گولی مارکر ہلاک کردیا،ان پانچوں کا تعلق بھارتی ریاست مغربی بنگال سے بتایا جاتا ہے۔علاوہ ازیں مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کی ریاستی دہشت گردی کا سلسلہ تاحال جاری ہے، سخت کریک ڈان اور کرفیو 88ویں روز میں داخل ہوگیا۔مقبوضہ وادی میں مودی سرکاری نے نظام زندگی درہم برہم کررکھا ہے، جبکہ بھارتی فوج کی جانب سے جارحیت کا سلسلہ بھی جاری ہے۔ وادی میں تجارتی مراکز بند اور ذرائع نقل وحمل سمیت ہر طرح کے مواصلاتی رابطے منقطع ہیں، کشمیری گھروں میں محصور ہو کر رہ گئے ہیں۔مقبوضہ کشمیرمیں کرفیو اور لاک ڈان کے باعث ٹرانسپورٹ اور کاروباری سرگرمیاں معطل ہیں جبکہ تعلیمی ادارے بھی تاحال بند ہیں۔بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق ضلع پلواما میں قابض بھارتی سکیورٹی فورس کی بکتر بند گاڑی پر مسلح افراد نے حملہ کردیا تاہم بلٹ پروف ہونے کے باعث گاڑی میں موجود اہلکار محفوظ رہے۔بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق سینٹرل ریزرو پولیس فورس کی بکتر بند گاڑی معمول کی گشت پر تھی کہ اچانک نامعلوم مسلح افراد نے دھاوا بول دیا لیکن بلٹ پروف ہونے کے باعث گاڑی کے اندر موجود اہلکار محفوظ رہے۔وادی بھر میں سخت سکیورٹی حصار ہونے کے باوجود حیران کن طور پر حملہ آور فرار ہوگئے۔ واقعے کے بعد خوف میں مبتلا بھارتی اہلکاروں نے شدید ہوائی فائرنگ کی جس سے علاقے میں خوف و ہراس پھیل گیا۔

مقبوضہ کشمیر

مزید :

صفحہ اول -