تاریخ میں پہلی مرتبہ سعودی عرب میں ڈبلیو ڈبلیو ای کا خواتین ریسلنگ میچ

تاریخ میں پہلی مرتبہ سعودی عرب میں ڈبلیو ڈبلیو ای کا خواتین ریسلنگ میچ
تاریخ میں پہلی مرتبہ سعودی عرب میں ڈبلیو ڈبلیو ای کا خواتین ریسلنگ میچ

  

ریاض (ڈیلی پاکستان آن لائن) سعودی عرب کے دارالحکومت ریاض میں رواں ماہ 11 اکتوبر سے شروع ہونے والے میوزیکل و ثقافتی میلے ’ریاض سیزن‘ میں پاکستانی فنکاروں کے علاوہ مشرق وسطیٰ و مغربی گلوکاروں کی جانب سے شاندار پرفارمنس کرکے شائقین کو محظوظ کیے جانے کا سلسلہ جاری ہے۔

رواں مہینے 25 اکتوبر کو پاکستانی گلوکاروں راحت فتح علی خان اور عاطف اسلم نے پرفارمنس کرکے مداحوں کے دل جیتے تھے۔’ریاض سیزن‘ نامی یہ میلا رواں برس دسمبر کے وسط تک جاری رہے گا اور اس میں متعدد عرب فنکاروں سمیت مغربی ممالک کے فنکاروں کی جانب سے بھی پرفارمنس کیے جانے کا امکان ہے۔

سعودی عرب کے اخبار ’سعودی گزٹ‘ کے مطابق ریاض کے شاہ فہد سٹیڈیم میں پہلی بار خواتین ریسلر ایک دوسرے کو مزا چکھاتی دکھائی دیں گی۔رپورٹ کے مطابق ریاض میں ہونے والے مقابلے میں 29 سالہ امریکی ریسلر لیسی ایونز اور 37 سالہ کینیڈین ریسلر نتالیا نیدھرت ایک دوسرے کو مزا چکھاتی دکھائی دیں گی۔

یہ پہلا موقع ہوگا کہ خواتین ریسلر سعودی عرب کی سرزمین پر فائٹ کریں گی، ساتھ ہی پہلی بار خواتین انتہائی مختصر لباس میں کھیل کھلتی دکھائی دیں گی۔دونوں خواتین کا ریسلنگ مقابلہ 31 اکتوبر کی شب کو ہوگا جو کہ ریاض سیزن کا حصہ ہے، ساتھ ہی ریاض میلے میں مرد ریسلر بھی ایک دوسرے کو مزا چکھاتے دکھائی دیں گے۔

مرد ریسلرز کے مقابلے میں سابق چیمپیئن ٹائسن فیوری اور برون سٹرومین سمیت کم سے کم ایک درجن ریسلر رنگ میں نظر آئیں گے۔ مرد ریسلرز کی فائٹ بھی 31 اکتوبر کی شب ہوگی اور ان کے مقابلے دیکھنے کیلئے 25 ریال سے 2 ہزار ریال کے ٹکٹ رکھے گئے ہیں۔

خیال رہے کہ اگرچہ پہلی بار سعودی عرب میں خواتین ریسلر فائٹ کرتی دکھائی دیں گی، تاہم سعودیہ میں مرد ریسلرز کے مقابلے پہلے منعقد ہو چکے ہیں اور ان مقابلوں کو 2018ءمیں پہلی بار خواتین نے دیکھا تھا۔سعودی حکومت نے گزشتہ چند سال میں خواتین کو نہ صرف مرد حضرات کے کھیل دیکھنے کی اجازت دی ہے بلکہ حکومت نے خواتین کو خاندان کے مرد سربراہ کی اجازت کے بغیر بھی بیرون ملک سفر کرنے کی اجازت دے دی ہے۔

یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ ’ریاض سیزن‘ نامی اس میلے کے پروگرامات دیکھنے کیلئے سعودی عرب کے تمام شہروں سے مرد و خواتین سمیت نوجوان نسل بڑی تعداد میں پہنچ رہی ہے اور پہلی بار مرد و خواتین کو ایک ہی جگہ مکمل تفریحی ماحول دیکھنے کو مل رہا ہے اور اس میلے کی تعریفیں پوری دنیا میں ہو رہی ہیں۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -کھیل -