کیا واقعی تیز گام میں آگ سلنڈر پھٹنے کی وجہ سے لگی، گاڑی کو کتنی دیر بعد روکا گیا؟ ٹرین کے ڈرائیور کا بیان سامنے آگیا

کیا واقعی تیز گام میں آگ سلنڈر پھٹنے کی وجہ سے لگی، گاڑی کو کتنی دیر بعد روکا ...
کیا واقعی تیز گام میں آگ سلنڈر پھٹنے کی وجہ سے لگی، گاڑی کو کتنی دیر بعد روکا گیا؟ ٹرین کے ڈرائیور کا بیان سامنے آگیا

  

لیاقت پور (ڈیلی پاکستان آن لائن) حادثے کا شکار ہونے والی تیز گام ایکسپریس کے ڈرائیور محمد صدیق کا کہنا ہے کہ ٹرین میں پہلے آگ لگی جس کے بعد بار بار سلنڈر پھٹتے رہے ، آگ لگنے کے چھ سات منٹ کے اندر گاڑی کو روک دیاگیا۔

حادثے کا شکار ہونے والی تیز گام ایکسپریس کے ڈرائیور محمد صدیق کا کہنا ہے کہ انہوں نے سکھر سے ڈرائیونگ شروع کی۔ ریل گاڑی 6 بج کر 15 منٹ پر لیاقت پور سے پاس ہوئی ، جس کے 5 سے 6 کلومیٹر کے بعد گاڑی کی چین کھینچی گئی ہے جس کے بعد میں نے گاڑی کھڑی کی، ہم نے نیچے اتر کر دیکھا تو پیچھے آگ لگی ہوئی تھی۔

ڈرائیور صدیق کے مطابق انہوں نے عملے سے کہا کہ سب سے پہلے گاڑی کو محفوظ کیا جائے،جن بوگیوں کو آگ لگی ہوئی تھی انہیں الگ کیا گیا ۔ ڈرائیور نے بتایا کہ انہوں نے آگ لگنے کے 6 سے 7 منٹ بعد گاڑی کو کھڑا کردیا تھا۔ محمد صدیق کے مطابق ٹرین میں پہلے آگ لگی اور اس کے بعد بار بار سلنڈر پھٹتے رہے، تقریباً 6 سے 7 سلنڈر پھٹے ۔

مزید :

قومی -علاقائی -پنجاب -رحیم یارخان -