استعفوں کا راستہ پی ڈی ایم کے لائحہ عمل میں شامل ،جومناسب سمجھا وہ کریں گے ،مولانا فضل الرحمان

استعفوں کا راستہ پی ڈی ایم کے لائحہ عمل میں شامل ،جومناسب سمجھا وہ کریں گے ...
استعفوں کا راستہ پی ڈی ایم کے لائحہ عمل میں شامل ،جومناسب سمجھا وہ کریں گے ،مولانا فضل الرحمان

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)صدر پی ڈی ایم مولانا فضل الرحمان نے کہاہے کہ پی ڈی ایم کی قیادت عوام کی بات کرتی ہے، سیاست دان کا فرض ہوتاہے عام آدمی کا ترجمان بنے،استعفوں کا راستہ پی ڈی ایم کے لائحہ میں شامل ہے،پی ڈی ایم میں مشاورت کے ساتھ جومناسب سمجھا وہ کریں گے ۔

پی ڈی ایم کے صدر مولانا فضل الرحمان نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ ایاز صادق نے انتہائی ذمہ دارانہ اور سنجیدہ بات کی ہے، اختلاف رائے اصولوں پر کرتے ہیں اور کرتے رہیں گے، ہمیں احتیاط کا دامن تھامے رکھنا چاہیے،اس بات کا حق نہیں دے سکتے کہ ان سے حب الوطنی کا سرٹیفکیٹ بھی لیتے رہیں۔

مولانا فضل الرحمان نے کہاکہ ہمارا واضح موقف ہے 25 جولائی 2018 کو دھاندلی ہوئی،ہم حکومت کے جواز کو تسلیم نہیں کرتے ،ہم توہین آمیز رویوں کےخلاف ہیں، تنقید سے کوئی بالا تر نہیں ہے، میرے خیال میں قیامت کی علامت ہے کہ مسلم لیگی غدار ٹھہرے ، انہوں نے کہاکہ حکومت اپوزیشن کو اشتعال دلاتی ہے، کابینہ احمقوں کا مربہ ہے،ملک کو آئین کےمطابق چلایا جائے۔

صدر پی ڈی ایم نے کہاکہ پچھلی حکومتیں پاکستان کو بلیک لسٹ سے نکال کر وائٹ میں لے گئی تھیں ،ملک معاشی لحاظ سے دیوالیہ ہو چکاہے،ناجائزحکومت ہم پر مسلط نہ کی جائے،دھاندلیاں نہ کی جائیں، آئین کی خلاف ورزی نہ کی جائیں،ملک میں بحران پیدا کیے جارہے ہیں،پی ڈی ایم کو توڑنے کی سازش کراچی میں ہوئی ،پی ڈی ایم قائم ہے اور اپنا پروگرام جاری رکھے گی ۔

انہوں نے کہاکہ پی ڈی ایم کی قیادت عوام کی بات کرتی ہے، سیاست دان کا فرض ہوتاہے عام آدمی کا ترجمان بنے،استعفوں کا راستہ پی ڈی ایم کے لائحہ میں شامل ہے،پی ڈی ایم میں مشاورت کے ساتھ جومناسب سمجھا وہ کریں گے ۔

مزید :

قومی -علاقائی -پنجاب -لاہور -