ویونگ کالج کی فیصل آباد منتقلی،شاہدرہ کی تنظیمیں سراپاءاحتجاج

                             فورم(ذکاءاللہ ملک)جی ٹی روڑ شاہدرہ پر واقع 100سالہ تاریخی فنی تعلیمی اداروںکو مسمار کرکے لاری اڈے کے قیام کے حکومتی فیصلے کے خلاف سماجی و رفاعی تنظیموں نے کمر کس لی،اور احتجاج کا فیصلہ کر لیا ہے۔حکومتی عدم دلچسپی اور عدم توجہ کے باعث شاہدرہ کو عرصہ دراز سے محرومیوں کا سامنا ہے ،جسکے باعث شاہدرہ کا علاقہ پسماندہ رہ چکا ہے ایشیا ءکا بڑا ٹیکنیکل ایجوکیشن انسٹیٹیوٹ قیام پاکستان کے بعد ہمارے حصے میں آیا جہاںسے ہزاروں نوجوان طلباء نے تعلیم حاصل کر کے ملکی تعمیر وترقی میں اپنا کردار ادا کیالیکن ابٹیکنیکل ایجوکیشن اینڈ ووکیشنل ٹرینگ اتھارٹی کے زیر نگرانی چلنے والے فنی تعلیمی اداروں کی 303ایکڑ اراضی کو لاری اڈا بنانے اور گورنمنٹ ویونگ انیڈ فنشنگ انسٹیٹیوٹ کو شاہدرہ سے فیصل آباد منتقل کرنے کے خلاف شاہدرہ بھرکے عوام اپنے حق کےلئے سڑکوں پر آئیں گے اور تا حکم ثانی پیچھے نہیں ہٹیں گے راوی ویلفیئرسوسائٹی اور شاہدرہ ویلفیئر سوسائٹی کے عہدیداروں کا پاکستان فورم میں کہنا تھا کہ 2011میں 50کروڑ روپے کی لاگت سے سکول کی عمارت،ووکیشنل ٹرنینگ انسٹیٹیوٹ اور ویونگ فنشنگ انسٹیٹیوٹ کی عمارتوں کو تعمیر کیا گیا تھا اور اب ان عمارتوں کو مسمار کر کے لاری اڈے کے قیام کا فیصلہ انتظامی نااہلی کا ثبوت ہےچیئرمین ویلفیئر سوسائٹی چوہدری راحت گجرنے فورم میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہاکہ تعلیم کی مناسب سہولیات کی ہر شہری کو فراہمی حکومت کا فرض ہوتا ہے جبکہ یہاں نئے تعلیمی اداروں کے قیام کی بجائے تاریخی و قدیمی تعلیمی اداروں کو بند کر کے بس ٹرمنلز کی منظوری دینا ایک منظم سازش ہے جسے علاقہ مکین ناکام بنا دیں گے۔چوہدری راحت کا کہنا تھا کہ مذکورہ معاملے پر گورنر پنجاب چوہدری سرور سے ایک وفد کے ہمراہ ملاقات بھی کر چکے ہیں جسمیں گورنر پنجاب نے صوبائی محکمے سے رپورٹ طلب کرنے کی یقین دہانی کروائی ہے جبکہ چیئرمین ٹیوٹا عرفان قیصر شیخ اس ایشو پر بھی ملاقات ہوئی ہے اور سربراہ ٹیوٹا نے معاملے کو خوش اسلوبی سے حل کرنے کی یقین دہانی کرواتے ہوئے انسٹیٹیوٹ کا دورہ کرنے کا وعدہ بھی کیا ہے۔صدر راوی ویلفیئر سوسائٹی حاجی فریاد کا کہنا تھا کہ گورنر پنجاب کو انسٹیٹیوٹ سے چند فاصلے پر محکمہ جنگلات کی 560کنال اراضی پر بس ٹرمنل بنانے کی تجویز بھی پیش کر چکے ہیں نائب صدر سوسائٹی چوہدری محمد افضل نے کہا کہ حکومت کو قدیمی ادارے کی بہتری اور علاقہ مکینوں کو فنی تعلیمی سہولیات کے لئے ٹھوس اقدامات کرنے کی ضرورت ہے،تاریخی تعلیمی انسٹیٹیوٹ کو بند کر کے لاری اڈے کے قیام سے شاہدرہ کے شہریوں میں احساس محرومی پیدا ہو گا۔جنرل سیکرٹری راوی ویلفیئر سوسائٹی خدا بخش نے فورم میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کو شعبہ تعلیم میں جامع پالیسیاں بنا کر غیر سیاسی فیصلے کرنے کی ضرورت ہے جس کی بدولت ملک میں شرع خواندگی میں تسلی بخش اضافہ ہو”پاکستان“ فورم سے اظہار خیال کرتے ہوئے وائس چیرمین راوی ویلفیئر سوسائٹی منور حسین کا کہنا تھا کہ عوام کی فلاح کا کام کرنا حکومت کی ترجیحات میں شامل ہونا چاہئے،فنی تعلیمی اداروں کو لاہور سے فیصل آباد ٹرانسفر کرناشاہدرہ کی عوام سے زیادتی ہے اور ہمارہی تنظیم اس سیاسی فیصلے کے خلاف سیسہ پلائی دیوار کے طور پر سامنے آئے گی اور حکومت کو یہ فیصلہ کرنے کی اجازت نہیں دے گی جس سے عوام تعلیم کی نعمت سے محروم ہو۔