پرائیویٹ سکولز کے بچوں کو تحفظ فراہم کرنا حکومت کی ذمہ داری ہے،مزمل اقبال

لاہور (پ ر) پروگریسو پرائیویٹ سکولز ایسوسی ایشن نے اپنے ہنگامی اجلاس میں مطالبہ کیا ہے۔ کہ تمام پرائیویٹ سکولز کے بچوں کو مکمل فول پروف سکیورٹی مہیا کی جائے اور طالب علموں میں موت اور دہشت کی فضا کو ختم کرنے کے لیے فوری اقدامات اٹھائے جائیں۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے مرکزی صدر PSA مزمل اقبال صدیقی نے مطالبہ کیا کہ حکومت پرائیویٹ سیکٹر میں تعلیمی اداروں کو ڈرانے دھمکانے کا سلسلہ فوری طورپر بند کرے۔ اندراج شدہ تمام ایف آئی آر فوری طور پر واپس لی جائیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ دسمبر 2014 میں بناے گئے SOPIS کی مناسبت سے سکیورٹی اقدامات پر عمل درآمد کرنا چاہتے۔ انہوں نے کہا کہ تعلیم صحت، جان و مال کا تحفظ آئین کے مطابق ہر حکومت کا بنیادی فرض ہے۔ لیکن ہمیں اس بات پر گہری تشویش ہے کہ حکومت پنجاب نے ان تمام فرائض سے اپنے ہاتھ اٹھا لیے ہیں اور تمام تر ذمہ داری پرائیویٹ سیکٹرز کے تعلیمی اداروں پر ڈال دی ہے۔ اگر حکومت معصوم طالب علموں کو سکیورٹی فراہم نہیں کر سکتی تو اسے فل الفور دستبردار ہوجاناچاہیے۔

اجلاس میں فیصلہ کیاگیا کہ تمام تر سکیورٹی خدشات کو مدِ نظر رکھتے ہوئے تمام پرائیویٹ سکولز یکم فروری بروز پیر کھولے جائیں گے۔ اس موقع پر PSA کے مرکزی جنرل سیکرٹری شیخ ارشد نے کہا کہ یکم فروری سے PEC کے امتحانات شروع ہو رہے ہیں۔ جسکے لیے انتہائی ناقص انتظامات کے گئے ہیں اور تاحال تمام بچوں کو رول نمبر سلپیں بھی جاری نہیں کی جا سکیں اور نہ ہی امتحانی مراکز پر بچوں کے لیے سکیورٹی کے تسلی بخش انتظامات کے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت فل الفور سکیورٹی کے فول پروف انتظامات کرے۔