تعلیم تحقیق اور ٹیکنالوجی سے استفادہ کرنے سے ہی معاشی استحکام آ سکتا ہے :چیئر مین واپڈا

صوابی(بیورورپورٹ)چیر مین واپڈا ظفر محمود نے آج کے جدید ٹیکنالوجی اور سائنس کے اس دور میں نتیجہ خیز ریسرچ پر بھر پور توجہ دینے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے واضح کر دیا ہے کہ تعلیم ،تحقیق اور ٹیکنالوجی ہی سے معاشی استحکام آسکتاہے ان خیالات کااظہار انہوں نے ہفتہ کے رو ز غلام اسحاق خان انسٹی ٹیوٹ آف انجینئرنگ سائنسز اینڈ ٹیکنالوجی ٹوپی ضلع صوابی میں نئے داخل شدہ طلبہ کے اعزاز میں منعقدہ تقریب سے بحیثیت مہمان خصوصی خطاب کر تے ہوئے کیا۔ جس میں صدر ساپرسٹ و سابق صوبائی وزیر اعلیٰ انجینئر شمس الملک کے علاوہ مسلم لیگ کے بانی رہنما سلیم سیف اللہ خان ، ریکٹر جی آئی کے انسٹی ٹیوٹ جہانگیر بشر ، پرو ریکٹر اکیڈمک پروفیسر ڈاکٹر جاوید اے چٹھہ ، پرو ریکٹر ایڈمن اینڈ فنانس احسن بصیر شیخ ، طلبہ اور والدین نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔ اس موقع پر واپڈا اور جی آئی کے کے مابین ایم او یو بھی دستخط کیا گیا چیر مین ظفر محمود نے اپنے خطاب میں کہا کہ پاکستان کو ایسے ریسرچ کی ضرورت ہے جو ملک کی ضروریات اور انڈسٹریز کو فروغ دینے کے مطابق ہو تاکہ ملک کی معاشی ترقی کا خواب شرمندہ تعبیر ہو سکے انہوں نے واضح کر دیا کہ آج کا دور جدید ٹیکنالوجی اور سائنس کا دور ہے اس لئے ہمیں اس دور سے پیچھے نہیں رہنا ہے ہمیں ایسے انجینئرز اور ایسے تعلیم یافتہ نوجوانوں کی ضرورت ہے جو ملکی مقاصد کے حصول میں اپنا کلیدی کر دار ادا کر نے کے علاوہ غربت اور لا علمی کے لعنت کو دور کر سکے انہوں نے کہا کہ ہمیں نتیجہ خیز ریسرچ پر توجہ دینے اور جدید ٹیکنالوجی کے میدان میں کامیابیوں سے ہمکنار ہونے کی اشد ضرورت ہے کیونکہ تعلیم ، ریسرچ اور ٹیکنالوجی سے معاشی استحکام جڑا ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ زندگی کے مختلف شعبوں میں ترقی کا راز جدید تعلیم میں مضمر ہے نوجوان نسل ضرور اپنے محنت اور لگن سے نئی دُنیا کو دریافت کریں انہوں نے نئے آنے والے طلبہ کو مخاطب کر تے ہوئے کہا کہ محنت اور تعلیم سے وہ اپنے مقاصد کے حصول میں تب کامیاب ہو سکتے ہیں جب وہ مسلسل محنت کریں ۔ جی آئی کے انسٹی ٹیوٹ کے ساپرسٹ وسابق وزیر اعلیٰ انجینئر شمس الملک نے کہا کہ اکیسویں صدی اعلیٰ تعلیم یافتہ ، ریسرچ اور قابل لوگوں کی صدی ہے اس لئے نوجوانوں کو کافی محنت کرنا ہو گی ۔ اس موقع پر ریکٹر انسٹی ٹیوٹ جہانگیر بشر نے کہا کہ ہم ڈسپلن پر زور دیتے ہیں طلبہ کو ایک پُر امن اور سٹڈی کا ماحول فراہم کر تے ہیں تاکہ طلبہ کے اعلیٰ تعلیم حاصل کر نے کا خواب پورا ہو سکے انہوں نے کہا کہ اگر کوئی ڈسپلن کی خلاف ورزی کریں تو اس سے رعایت نہیں کرینگے ہم اپنے طلبہ کو اس طرح دیکھنا چاہتے ہیں جو جی آئی کے انسٹی ٹیوٹ کے طالب علم سے توقع رکھتے ہیں پر و ریکٹر اکیڈمک پروفیسر ڈاکٹر جاوید اے چٹھہ نے کہا کہ جی آئی کے انسٹی ٹیوٹ ملک کے بڑے بڑے شہروں میں انٹری ٹیسٹ کے انعقاد کے نتیجے میں ملک بھر سے طلبہ کے داخل درخواستوں پر میرٹ پر داخلے دیئے جاتے ہیں #