پنجاب یونیورسٹی اور پنجاب کمیشن آن دی سٹیٹس آف ویمن کے درمیان معاہدہ

لاہور(ایجوکیشن رپورٹر)پنجاب یونیورسٹی اور پنجاب کمیشن آن دی سٹیٹس آف ویمن کے درمیان خواتین کے حقوق بارے آگاہی دینے اور اس ضمن میں طلباؤ طالبات کو تحقیق میں مصروف عمل رکھنے کے لئے معاہد ہ طے پاگیا ہے ۔اس سلسلے میں مفاہمتی یاداشت پر دستخط کی تقریب وائس چانسلر پنجاب یونیورسٹی آفس کے کمیٹی روم میں منعقدہوئی ۔ اس موقع پر وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر ظفر معین ناصر ، چیئرپرسن پنجاب کمیشن آن دی سٹیٹس آف ویمن فوزیہ وقار، ڈین فیکلٹی آف بیہوریل اینڈ سوشل سائنسز پروفیسر ڈاکٹر ذکریا ذاکر، رجسٹرار ڈاکٹر محمد خالد خان، ڈاکٹر روبینہ ذاکراورڈائریکٹر ایکسٹرنل لنکجز ڈاکٹر فوزیہ ہادی علی نے شرکت کی ۔معاہدے کی رو سے دونوں فریقین خواتین بارے قوانین،پالیسیاں اور خدمات سے متعلق آگاہی فراہم کرنے کے ساتھ عورت کو معاشرے میں تبدیلی کے عنصر کے طور پرمتعارف بھی کرائیں گے۔ اجلاس سے گفتگو میں وائس چانسلر پنجاب یونیورسٹی پروفیسر ڈاکٹر ظفر معین ناصر نے کہا کہ معاشرے میں عورت کو مضبوط بنانے اور ان کے حقوق کے تحفظ کیلئے مزید کوششوں کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہاکہ صنفی بنیادوں پر امتیازی سلوک کا خاتمہ ہونا چاہیے۔ پروفیسر ڈاکٹر ذکریا ذاکر نے کہا کہ معاہدے کے مطابق پنجاب کمیشن آن دی سٹیٹس آف ویمن میں دستیاب ڈیٹا کو پرکھنے اورمزید تحقیق کے نتیجہ میں حاصل ہونے والی معلومات طلبہ کیلئے خواتین کے مسائل پر تحقیق کے نئے راستے کھولے گی ۔
انہوں نے کہا کہ پنجاب کمیشن آن دی سٹیٹس آف ویمن کے زیر اہتمام منعقدہ تقاریب، مشاورتی اجلاس، سوشل میڈیا مہم اور دیگر اقدامات میں پنجا ب یونیورسٹی کے طلبہ شرکت کر سکیں گے۔پنجاب کمیشن آن دی سٹیٹس آف ویمن کی چیئرپرسن فوزیہ وقار نے کہا کہ دونوں ادارے تحقیق کے ذریعے خواتین کے حقوق بارے آگاہی فراہم کرنے اورانہیں مزید مضبوط کرنے کیلئے مل کر کام کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ معاہدے کا ایک اور مقصد پنجاب کمیشن آن دی سٹیٹس آف ویمن کے تحقیقی دائرے کو یونیورسٹی کے طلباؤ طالبات اور فیکلٹی ممبران تک وسیع کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ معاہدے کے مطابق ہر تعلیمی سال میں چھ آگاہی سیمینار ز منعقد کئے جائیں گے۔