ہمارے ہاتھ پاؤں باندھ کر انتخابات میں اتار ا گیا : سینیٹر مشاہد اللہ

ہمارے ہاتھ پاؤں باندھ کر انتخابات میں اتار ا گیا : سینیٹر مشاہد اللہ

کراچی (اسٹاف رپورٹر)پاکستان مسلم لیگ (ن) رہنما مشاہد اللہ نے کہا ہے کہ ہمارے ہاتھ پاؤں باند ھ کر انتخابات میں اتارا گیا ۔انتخابات میں اداروں نے سکیورٹی کے امور سنبھالنے کے بجائے پولنگ کا سسٹم ہی اپنے ہاتھ میں لے لیا تھا ۔ ایک سال سے ہماری پارٹی کو ٹارگٹ کیا گیا ۔ عمران خان کو چھوٹ دی گئی ، جب ان سے بات نہ بنی تو ادارے خود انتخابات کے نتائج پر حاوی ہو گئے ۔ عمران خان وزیر اعظم کے بجائے سول مارشل لاء ایڈمنسٹریٹر بن جائیں گے ۔ پیپلز پارٹی کو سیٹیں اس ڈر سی دی گئیں کہ کہیں وہ مسلم لیگ (ن) سے نہ مل جائے ۔ ہم نے ہمیشہ ہار کر بھی شکست تسلیم کی ۔ مگر اس انتخابات کے نتائج تسلیم نہیں کریں گے ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے کراچی پریس کلب میں خواجہ طارق نذیر ، علی اکبر گجر اور مسلم لیگ (ن) سندھ کے دیگر رہنماؤں کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ انہوں نے کہا کہ ہم اس سسٹم کو ختم نہیں کرنا چاہتے بلکہ ہم جمہوریت کو جمہور کے طرز سے چلانے کا عزم رکھتے ہیں ۔ یہ 1970 ء کا وقت نہیں ۔ عوام نے کھل کر دیکھا کہ نتائج کے ساتھ کیا کیا گیا ۔ ہمارے پولنگ ایجنٹس کو ایک کمرے میں بند کر دیا گیا تھا اور ہمارے پولنگ ایجنٹس کو خالی بیلٹ باکس نہ دکھائے گئے ۔ انہوں نے کہا کہ پارٹی مشاورت کے بعد جو بھی فیصلہ ہو گا ، ہم اسے قبول کریں گے ۔ جب بھی ملک میں دھاندلی ہوئی ، ملک کی سلامتی کو نقصان پہنچا ۔ انہوں نے کہا کہ اس کے ذمہ دار وہی لوگ ہوں گے ، جو اس دھاندلی میں شامل تھے ۔ ہم کسی کو بھی ملک کے مستقبل سے کھیلنے نہیں دیں گے ۔ عمران خان کٹھ پتلی ہے ۔ اس کی ڈور کسی اور کے ہاتھ میں ہے ۔ انہوں نے کہا کہ جہاں سے پی ٹی آئی کو جیتنا تھا ، ان پولنگ اسٹیشن کا رزلٹ دو گھنٹے میں آگیا تھا جبکہ کراچی کا رزلٹ 24 گھنٹے بعد بھی نہ آ سکا ۔ کراچی میں عمران خان کو 91 ہزار ووٹ کا مطلب دھاندلی کی انتہا ہے ۔ انہوں نے کہاکہ مولانا فضل الرحمن ، سراج الحق ،محمود اچکزئی اور ہمیں ٹارگٹ کیا گیا ۔ دنیا کو یہ دکھایا گیا کہ پولنگ پرامن ہے مگر حقیقت میں پولنگ اسٹیشنز پر مارشل لاء لگایا گیا تھا ۔ ۔ آر ٹی ایس سسٹم خراب نہیں ہوا تھا بلکہ ایک سوچے سمجھے منصوبے کے تحت دھاندلی کی غرض سے رزلٹ روکا گیا ۔ شیخ رشید اور عمران خان کچھ قوتوں کا بار بار شکریہ ادا کر رہے ہیں ۔ انہوں نے کہاکہ پیپلز پارٹی ایک جمہوری پارٹی ہے ہم ان کے مینڈیٹ کا احترام کرتے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان کی کہی ہوئی بات ہمیں اب سمجھ آ گئی ہے کہ امپائر کون ہے اور انگلی کس کی اٹھی ہے ۔ ایک سوال کے جواب پر انہوں نے کہا کہ 272 حلقے کھلنے کے بعد ہی ہم رزلٹ کو تسلیم کریں گے ۔

مزید : کراچی صفحہ اول