الفانوس پاکستان کا مقابلہ کتب و رسائل ایورڈز 

 الفانوس پاکستان کا مقابلہ کتب و رسائل ایورڈز 
 الفانوس پاکستان کا مقابلہ کتب و رسائل ایورڈز 

  

 علم و ادب کے فروغ میں مصروف عمل عالمی ادبی تنظیم الفانوس پاکستان  کے زیر اہتمام گوجرانوالہ کی تاریخ میں  پہلے مقابلہ کتب و رسائل ”الفانوس ایوارڈ“ کی پروقار تقریب تنظیم کے مرکز گوجرانوالہ کی سب سے بڑی اور معیاری درسگاہ  مشرق کالج کے وسیع ہال میں انعقاد پزیر ہوئی جس کی صدارت گوجرانوالہ کی ہردل عزیز  ممتاز ادبی شخصیت  ڈاکٹر ڈاکٹر سعید اقبال سعدی  نے کی،مہمانان خاص ملک کے ممتاز شاعر ادیب فرحت عباس شاہ لاہور، ڈاکٹر غافر شہزاد لاہور،علی نواز شاہ لاہور،ڈاکٹر شاہدہ دلاور لاہور، پروفیسر صفدر علی انشاء کراچی،اعزازی مہمانوں میں میجر شہزاد نیر گوجرانوالہ، جان کاشمیری گوجرانوالہ، محمد انور گورائیہ نارووال، محمد افتخار ٹوبہ ٹیک سنگھ اور ایوارڈ حاصل کرنے والے ادبا و شعراء کے علاوہ پاکستان کے مختلف شہروں سے درجنوں شعراء  و ادباء  الفانوس پاکستان کی کابینہ اور متعدد مقامی  ادباء شعراء اور دانشوروں،باذوق سامعین نے بھر پور شرکت کی اور الفانوس کی اس تاریخ ساز تقریب کو چار چاند لگائے۔تقریب کا آغاز تلاوت قرآن پاک سے ڈاکٹر عبدل ماجد المشرقی نے کیا اور نعت کی سعادت عثمان لیاقت نے حاصل کی۔ دلشاد احمد صدر الفانوس پاکستان علی احمد جنرل سیکرٹری یونس گل نائب صدر منصف ہاشمی سابق صدر اور شہباز احمد ساحر بانی و چیئرمین نے الفانوس پاکستان کی کارکردگی اور سرگرمیوں پر تفصیل سے روشنی ڈالی۔پاکستان کے ممتاز ادباء مہمانوں نے عالمی ادبی تنظیم کی عالمی سطح پر ہونے والی سرگرمیوں کو بے حد سراہا۔  اس تقریب میں کتب و رسائل اور مہمانان گرامی معزز ادبی و علمی شخصیات کو کل 70 ایوارڈز دئیے  گئے جن شعراء  و ادباء  دانشوروں نے ملک بھر سے آئے ہوے منتخب تخلیق کاروں کو اپنے دست مبارک سے الفانوس ایوارڈز پیش کیے ان میں  شیراز ساگر،شاہد فیروز،عبدلماجد مشرقی،محمد انور گورایہ، افضل سراج،عرفانہ امر،جان کاشمیری،ڈاکٹر غافر شہزاد،فرحت عباس شاہ،علی نواز شاہ،عمر فاروق،میجر شہزاد نیر،سعید اقبال سعدی،یونس گل،علی احمد،دلشاد احمد،ڈاکٹر شاہدہ دلاور شاہ، آفتاب عالم بٹ، ذوالفقار علی گھمن، صوبیہ ملک،آسیہ پروین اور شہباز ساحر شامل تھے۔ الفانوس ایوارڈ  جن افراد کو دئیے گئے ان میں عقیدت کے حوالے سے اول پوزیشن کراچی کی ممتاز شاعرہ  پروین حیدر کی حمد نعت مرثیہ کی کتاب  ”کشت ِ غم“ نے حاصل کی جبکہ دوم پوزیشن چنیوٹ کے معروف شاعر ڈاکٹر زاہد یاسین اکھیاں کی نعتیہ شاعری کی کتاب ”دْرِنجف“ نے حاصل کی اور تیسری پوزیشن سرگودھا کے معروف نعت گو شاعر مشرف حسین انجم کے نعتیہ شعری مجموعہ نے حاصل کی۔اردو غزل  کے حوالے سے اول پوزیشن کمالیہ کے معروف شاعر پروفیسر اقرار مصطفی کے شعری مجموعے ”اقرار“  نے حاصل کی دوم پوزیشن حافظ آباد کے معروف نوجوان شاعر آصف جاوید کے شعری مجموعے ”قید وفا“ نے اور سوم پوزیشن  حیدر آباد کے ممتاز ماہر تعلیم معروف شاعر پروفیسر ظہیر اقبال  کے شعری مجموعے ”وہ لوگ کب کے گئے“ نے حاصل کی۔

 پنجابی شاعری میں اول پوزیشن شکرگڑھ کے معروف شاعر  بشیر کمال کے پنجابی شعری مجموعے ”دھرتی امبر تارے“ نے حاصل کی اور دوم پوزیشن ڈسکہ سیالکوٹ کے معروف شاعر عاشق علی عاشق کے پنجابی شعری مجموعہ ”دکھ دی پیڑ“ نے حاصل کی اور سوم پوزیشن  چنیوٹ کے معروف شاعر ڈاکٹر زاہد یٰسین اکھیاں کی کتاب ”پرم پیالہ“ نے اور کاہنہ نو لاہور کے شاعر ادیب جناب محمد ساجد کے اردو پنجابی شعری مجموعے ”شہر دل میں آوارگی“  نے حاصل کی۔

 افسانے کے مقابلہ میں سعودی عرب میں مقیم ممتاز افسانہ نگار شاعر محترم جناب محمد ایوب صابر کے افسانوی مجموعے  ”آنگن میں خوشبو“ نے حاصل کی افسانے کی دوم پوزیشن لاہور میں مقیم  معروف افسانہ نگار اور شاعر محترم جناب محمد جاوید انور صاحب کے افسانوی مجموعے ”برگد“ نے حاصل کی جبکہ افسانے کی سوم پوزیشن حیدرآباد (انڈیا) سے ممتاز افسانہ نگار محترم جناب محمد مجیب احمد کے افسانوی مجموعے ”میرے دکھ کی دعا کرے کوئی“ نے حاصل کی۔ طنز و مزاح کی اول پوزیشن کراچی کی ممتاز نثر نگار رائٹر محترمہ کتاب ”اماں ّ نامہ“ نے حاصل کی دوم پوزیشن  کراچی کے معروف شاعر صفدر علی انشاء کے مجموعہ کلام ”آبیل۔۔۔۔۔!“نے حاصل کی جبکہ سوم پوزیشن ڈسکہ سیالکوٹ کے مزاح نگار جناب عدیم چوہدری کی کتاب iss ”فٹ“ کے حصے میں آئی ناول کیٹیگری میں گوجرانوالہ کی معروف ناول نگار شاعرہ  لالہ رخ بخاری کے ناول ”جہاں گلزار موسم تھے“ کو منفرد الفانوس ایوارڈ دیا گیا۔ اردو ماہیہ کا انفرادی ایوارڈ رحیم یار خاں کے معروف شاعر  امین بابر کی کتاب ”سپنوں کا میلہ“ کو  دیا گیا۔سفر نے کا منفرد ایوارڈ اسلام آباد کے معروف ادیب حسنین نازش کے سفر نامے ”دیوار چین کے سائے تلے“ کو دیا گیا۔ ہنکو سہ حرفیاں۔ ”دل کنارے“کو بھی منفرد ایوارڈ دیا گیا۔

جن کتب و رسائل کو اعزازی ”الفانوس ایوارڈ“ دیئے گئے ان میں یہ کتب شامل ہیں خالی بک (شاعری) ڈاکٹر صابرہ شاہین (ڈیرہ اسماعیل) خواب سے خواب تک (شاعری)حناارشد لاہور، کئی منظر ادھورے ہیں (شاعری) محمد جاوید انور (لاہور)، گلزار مصطفی (نعتیہ انتخاب) گل بخشالوی(کھاریاں)، جو آنسو بہہ نہیں پاتے (شاعری) شاہ دل شمس حافظ آباد سہ ماہی ”اجمال“۔ فہیم الاسلام  (کراچی) ماہ نامہ ”پرواز“  ساحر شیوی (لندن)۔ ماہ نامہ ”انٹر ایکشن“ یوسف راہی  (کراچی)کتابی سلسلہ ”انشاء“  صفدر علی انشاء (کراچی)ماہنامہ ”زاویہ نگاہ“ یوسف راہی (کراچی) خواب خوشبو آئینے (شاعری) عظمت فردوس اسوہ اس شہر میں  (شاعری) عاصم عاصی(وقت کی پابندی کا پاس رکھتے ہوئے تقریب کا آغاز ٹھیک وقت پر ہو اور ایوارڈ تقریب اپنے مقررہ وقت سے تیس منٹ پہلے یعنی ڈھائی گھنٹے میں ساڑھے پانچ بجے کامیابی سے سمیٹ کر بقیہ 30منٹ میں سٹیج کے مہمانوں سے  پانچ اشعار کی پابندی کے ساتھ ایک خوبصورت مشاعرہ اس تقریب کی رونق کو اور بھی چار چاند لگا گیا اس مختصر وقت میں ملک کے ممتاز شعراء نے جس محبت اور پابندی اشعار کے شعار کا مظاہرہ کیا وہ تادیر یاد رہے گا)

فروغ علم و ادب میں سرگرداں عالمی ادبی تنظیم الفانوس پاکستان کے زیر اہتمام مرکز گوجرانوالہ میں عالمی سطح پر منتخب کتب اور رسائل و جرائد پر ”الفانوس ایوارڈ“ تقریب میں گوجرانوالہ کے ان تمام دانشوروں شعراء  ادباء  اور سماجی راہنماؤں کا شکریہ ادا کیا گیا جنہوں نے  خصوصی طور پر شرکت کر کے اس تاریخی  تقریب میں ملک اور بیرون ملک کے دانشوروں تخلیق کاروں شعراء  کے ایوارڈز اپنے دست مبارک سے پیش کر کے یا شرکت کر کے ان  کی عزت افزائی کرتے ہوے گوجرانوالہ میں اک نئی روایت (الفانوس ایوارڈ) کی بنیاد رکھی جن صاحبان الفانوس معزز احباب نے اپنی شرکت سے مدتوں یاد رہنے والی اس پروقار تقریب کو چار چاند لگانے اور مہمانوں کی حوصلہ افزائی کرنے میں اپنا اہم کردا کیا ان سینئرز میں ڈاکٹر سعید اقبال سعدی،قاضی اعجاز محور،ڈاکٹر عبدلماجد مشرقی،شہزاد نیر،عمران ہاشمی، شاہد فیروز، شیرازساگر، جان کاشمیری،رانا محمد اظہرحسین،تسنیم چیمہ، بہلول زم زم،افضل سراج، آفتاب عالم بٹ، عمر فاروق ناز، مشتاق کشفی،عرفانہ امر، صوبیہ ملک، آسیہ پروین،نسیم صادق، علی ہاشمی،عثمان لیاقت، عبدلرزاق،لالہ نزیر احمد،مسز عطاالرحمان امان اللہ مان، ذوالفقار علی گھمن، محمد افتخار احمد،اعظم طفیل، امانت علی، اعجاز احمد،مسعود ذوق، اکرم راٹھ  شامل ہیں۔ 

 احباب نے الفانوس عالمی کی اس کاوش کو سراہا ہم سراپا ممنون ہیں اور ہم آپ کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں:ا دبستان گوجرانوالہ میں ہر سال عالمی سطح پر شائع ہونے والی کتب پر”الفانوس ایوارڈ“  کا اہتمام کیا جائے گا  اگلے الفانوس ایوارڈ کے لیے رواں میں جملہ اصناف میں شائع ہونے والی کتب   اور رسائل و جرائد کی چار کاپیاں انشاء اللہ سال  31 دسمبر   تک تنظیم کے مرکز درج ذیل ایڈریس پر بھیج سکتے ہیں الفانوس لائبریری صابر ٹاؤن کنگنی والا گوجرانوالہ پاکستان

٭٭٭٭٭

مزید :

رائے -کالم -