پاکستان پر ایک اور بھارتی جارحیت کا امکان ہے ،دشمن 16 سے 20 اپریل تک کارروائی کر سکتا ہے،شاہ محمود قریشی

پاکستان پر ایک اور بھارتی جارحیت کا امکان ہے ،دشمن 16 سے 20 اپریل تک کارروائی ...
پاکستان پر ایک اور بھارتی جارحیت کا امکان ہے ،دشمن 16 سے 20 اپریل تک کارروائی کر سکتا ہے،شاہ محمود قریشی

  


ملتان (ڈیلی پاکستان آن لائن)وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ بھارتی جنگی جنون کے بادل ابھی پوری طرح چھٹے نہیں ، بھارت پاکستان پرجارحیت کاایک اورمنصوبہ بنارہاہے،مقبوضہ کشمیرمیں پلوامہ جیساایک اورنیاواقعہ رونماکیاجاسکتاہے،بھارت 16 سے 20 اپریل تک جارحیت کرسکتاہے۔

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ پلوامہ واقعہ کے بعدبھارت نے پاکستان پرالزامات کی بوچھاڑکردی، پاکستان کشیدگی کم جبکہ بھارت بڑھاتارہا،انہوں نے کہا کہ بھارت نے جنگی جنون کوہوادی اورخطے کے استحکام کومتاثرکیا،مودی سرکارنے سیاسی مقاصدکیلئے خطے کے امن کوداؤپرلگادیا،انہوں نے کہا کہ بھارتی جنگی جنون کے بادل ابھی پوری طرح چھٹے نہیں ، بھارت پاکستان پرجارحیت کاایک اورمنصوبہ بنارہاہے،مقبوضہ کشمیرمیں پلوامہ جیساایک اورنیاواقعہ رونماکیاجاسکتاہے،بھارت 16 سے 20 اپریل تک جارحیت کرسکتاہے۔

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ فیصلہ بھارتی وزیراعظم کی زیرصدارت اجلاس میں ہوا،بھارتی کابینہ کمیٹی اجلاس میں تینوں مسلح افواج کے سربراہان موجودتھے،بھارتی وزیراعظم کہتے ہیں میں نے آپ کوفری ہینڈدے رکھاہے،بھارتی وزیراعظم کایہ بیان قابل تشویش ہے، انہوں نے کہا کہ بھارتی مسلح افواج کے سربراہان نے کہاٹارگٹ کابھی انتخاب کرلیا،ہمارے پاس قابل اعتمادانٹیلی جنس اطلاعات ہیں۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ عالمی طاقتیں خطے کے استحکام کیلئے اپناکرداراداکریں،سلامتی کونسل بھارت کوجارحانہ رویے سے روکے،پاکستان نے ہمیشہ کشمیریوں کی پرامن جدوجہدکوسراہا ہے،ہم مقبوضہ کشمیر کے متاثرین کےساتھ تھے اورہیں،انہوں نے کہا کہ لائن آف کنٹرول پرمسلسل فائرنگ جاری ہے، بھارت ایل اوسی پرنہتے شہریوں کونشانہ بنارہاہے،وزیر خارجہ نے کہا کہ پلوامہ واقعہ کے بعدمقبوضہ کشمیرمیں تشددکے واقعات بڑھے،دفترخارجہ نے سفیروں کونئی بھارتی منصوبہ بندی سے آگاہ کیا،پاکستان میں سرجیکل سٹرائیکس کے بھارتی دعوے جھوٹ ثابت ہوئے،مودی کادعویٰ تھاکہ 300 دہشتگردوں کوہلاک کیا،مودی سرکارایک بھی لاش نہیں دکھاسکی،ہم نے پاکستانی ایف 16گرانے کے دعوے کی تردیدکی۔

انہوں نے کہا کہ امریکانے تصدیق کی ہے کہ پاکستان کے پاس ایف 16 طیارے پورے ہیں،وہ ایک لاش،ایک جنازہ اورہسپتال میں ایک زخمی نہیں دکھاسکے،انہوں نے کہا کہ بھارتی رویہ جارحانہ اورہمارامصالحانہ رہا،ہم پربھارتی پائلٹ کی رہائی کاہرگزدباو¿نہیں تھا،امن پیغام اورکشیدگی میں کمی کیلئے بھارتی پائلٹ رہاکیا،دنیانے بھارتی پائلٹ کی رہائی کے اقدام کوسراہا۔انہوں نے کہا کہ ہماراوفدبھارت گیااوراٹاری میں بیٹھ کرمثبت مذاکرات کئے،ان کا کہناتھا کہ رواں ماہ 360 بھارتی قیدی رہاکرنےکافیصلہ کیاہے۔

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ پاکستان نے چین،امریکا،برطانیہ اوردیگرممالک سے رابطہ کیاہے،ہم نہیں چاہتے کہ بھارت حملے کی حماقت کرے،ہم نہیں چاہتے کہ بھارت کی جانب سے ایسی حماقت دوبارہ دہرائی جائے،انہوں نے کہا کہ دوبارہ جارحیت کی کوشش کی تودفاع کا حق محفوظ رکھتے ہیں،شاہ محمود قریشی نے کہا کہ وزیراعظم سے مشاورت کے بعدحقائق سامنے لانے کافیصلہ کیا،ہمارے سواختلافات صحیح،بھارت جارحیت کےخلاف ہم ایک ہیں،اپوزیشن سے درخواست ہے قومی سلامتی کے معاملات پرساتھ دے،انہوں نے کہا کہ اپوزیشن کےساتھ بیٹھنے سے ہم نے کبھی انکارنہیں کیا،دھرنے کے دوران نوازحکومت کے نمائندوں کےساتھ مذاکرات ہوتے تھے،جب ہم نے دھرنادیا تھا تواسحاق ڈارمذاکرات کیلئے آتے تھے،ہم نے کبھی اصرارنہیں کیاکہ نوازشریف مذاکرات کیلئے آئیں۔

مزید : اہم خبریں /قومی /علاقائی /پنجاب /ملتان


loading...