تمام خلق خدا دیکھ کے یہ حیراں ہے|اخلاق محمد خان |

تمام خلق خدا دیکھ کے یہ حیراں ہے|اخلاق محمد خان |
تمام خلق خدا دیکھ کے یہ حیراں ہے|اخلاق محمد خان |

  

تمام خلق خدا دیکھ کے یہ حیراں ہے

کہ سارا شہر مرے خواب سے پریشاں ہے

میں اس سفر میں کسی موڑ پر نہیں ٹھہرا

رہا خیال کہ وہ وادیٔ غزالاں ہے

یہ ایک میں کہ تری آرزو ہی سب کچھ ہے

وہ ایک تو کہ مرے سائے سے گریزاں ہے

تو حافظے سے ترا نام کیوں نہیں مٹتا

جو یاد رکھنا ہے مشکل بھلانا آساں ہے

میں اس کتاب کے کس باب کو پڑھوں پہلے

وصال جس کا ہے مضموں فراق عنواں ہے

شاعر: اخلاق محمد خان

 ( شعری مجموعہ:خواب کا در بند ہے؛سالِ اشاعت1985 )

Tamaam   Khalq-e-Khuda   Daikh   K   Yeh   Hairaan   Hay

Keh   Saara   Shehr   Miray   Khaab   Say   Pareshaan   Hay

 Main    Iss   Safar   Men   Kisi   Morr    Par   Nahen   Thehra

Raha   Khayaal   Keh   Wo   Waadi-e-Ghazalaan   Hay

 Yeh   Aik   Main   Keh   Tiri    Aarzu   Hi   Sab   Kuchh   Hay

Wo   Aik   Tu   Keh   Miray   Saaey   Say    Guraizaan   Hay

To   Haafzay   Say   Tira   Naam   Kiun   Nahen   Mit'ta

Jo   Yaad   Rakhna    Hay   Mushkill    Bhulaana   Aasaan   Hay

 Main   Iss   Kitaab   K   Kiss   Baab   Ko   Parrhun   Paihlay

Visaal   Jiss   Ka   Hay   Mazmoon   Firaaq   Unwaan   Hay

 Poet: Akhlaq   Muhammad   Khan

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -