بدن کا بوجھ لیے، روح کا اضطراب لیے

بدن کا بوجھ لیے، روح کا اضطراب لیے
بدن کا بوجھ لیے، روح کا اضطراب لیے

  

بدن کا بوجھ لیے، روح کا اضطراب لیے

کدھر کو جاوں طبیعت کا اضطراب لیے

یہی امید کہ شاید ہو کوئی چشم براہ

چراغ دل میں لیے، ہاتھ میں گلاب لیے

عجب نہیں کہ مری طرح یہ اکیلی رات

کسی کو ڈھونڈنے نکلی ہو ماہتاب لیے

سوا ہے شب کے اندھیروںسے دن کی تاریکی

گئے وہ دن جو نکلتے تھے آفتاب لیے

کسی کے شہر میں مانندِ برگِ آوارہ

پھرے ہےں کوچہ بہ کوچہ ہم اپنے خواب لیے

کہاں چلے ہو خیالوں کے شہر میں ثروت

گئے دِنوں کی شکستہ سی یہ کتاب لیے

شاعر:ثروت حسین

Badan Ka Bojh Liay, Rooh Ka Azaab Liay

Kidhar Ko Jaaun Tabeat Ka Iztraab Liay

Yahi Umeed Keh Shaayad Ho Koi Chashm  e  Barah

Charaagh Dil Men Liay, Haath Mwn Gulaab Liay

Ajab Nahen Keh Miri Trah Yeh Akaili Raat

Kisi Ko Dhoondnay Nikli Ho Mahtaab Liay

Siwaa Hay Shab K Andhairon Say Din Ki Tareeki

Gaey Wop Din Jo Nikaltay Thay Aftaab Liay

Kisi K Shehr Men Manind  e  Barg  e  Awaara

Phiray Hen Koocha Ba Koocha Ham Apnay Khaab Liay

KahaN Chalay Ho Khayalon K Shehr Men SARWAT

Gaey Dino Ki Shakista Si Yeh Kitaab Liay

Poet: Sarwart Hussain

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -