آنکھ سورج ہے جسم سایا ہے | جاذب قریشی |

آنکھ سورج ہے جسم سایا ہے | جاذب قریشی |
آنکھ سورج ہے جسم سایا ہے | جاذب قریشی |

  

آنکھ سورج ہے جسم سایا ہے

اک مسافر سفر سے آیا ہے

اُس نے ترکِ سفر کیا اور پھر 

راستہ میرے گھر تک آیا ہے

میں ہوں تنہا مرے تعاقب میں

ایک سورج ہے ایک سایا ہے

گھر کی دہلیز پر ہے دستک سی 

اس اندھیرے میں کون آیا ہے

پتھروں میں ہے روشنی میری

بارشوں نے مجھے جلایا ہے

دھوپ سے دھوپ تک سفر کرنا

طائروں نے مجھے سکھایاہے

شاعر:جاذب قریشی

(شعری مجموعہ: شیشے کا گھر؛سال اشاعت،1991)

Aankh   Sooraj   Hay   Jism   Saaya   Hay

Ik   Musaafir   Safar    Say   Aaya   Hay

Uss   Nay   Tark-e-  Safar   Kiya   Aor   Phir

Raasta    Meray   Ghar   Tak   Aaya     Hay

Main   Hun   Tanhaa    Miray   Taaqub   Men

Aik   Sooraj  Hay   Aik   Saaya   Hay

Ghar   Ki   Daihleez   Par   Hay   Dastak   Si

Iss   Andhairay  Men   Kon    Aaya    Hay

Patharon   Men    Hay   Roshani   Meri

Baarshon   Nay   Mujha    Jalaaya   Hay

Dhoop   Say   Dhoop   Tak   Safar   Karna

Taairon   Nay   Mujhay   Sikhaaya   Hay

Poet: Jazib  Quraishi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -