دل کو خیالِ یار نے مخمور کر دیا  | حسرت موہانی |

دل کو خیالِ یار نے مخمور کر دیا  | حسرت موہانی |
دل کو خیالِ یار نے مخمور کر دیا  | حسرت موہانی |

  

دل کو خیالِ یار نے مخمور کر دیا 

ساغر کو رنگ بادہ نے پر نور کر دیا 

مانوس ہو چلا تھا تسلی سے حال دل 

پھر تو نے یاد آ کے بدستور کر دیا 

کچھ ایسی ہو گئی ہے تیرے غم کی مبتلا 

گویا کسی نے جان کو مسحور کر دیا 

بیتابیوں سے چھپ نہ سکا ماجرائے دل 

آخر حضور یار بھی مذکور کر دیا 

اہلِ نظر کو بھی نظر آیا نہ روئے یار 

یاں تک حجاب نور نے مستور کر دیا 

حسرتؔ بہت ہے مرتبۂ عاشقی بلند 

تجھ کو تو مفت لوگوں نے مشہور کر دیا 

شاعر: حسرت موہانی

(دیوانِ حسرت موہانی، حصہ اول: سال اشاعت،1918)

Dil   Ko   Khayaal -e-Yaar  Nay  Makhmoor   Kar    Diya

Saaghar    Ko    Rang-e-Baada   Nay   Pur   Noor  Kar    Diya

Manoos   Ho   Chala   Tha   Tasalli   Say   Haal-e-Dil

Phir   Tu   Nay    Yaad   Aa   K   Badastoor   Kar    Diya

Kuch   Aisi   Ho  Gai   Hay   Tiray   Gham   Ki   Mubtalaa

Goya   Kisi    Nay Jaan   Ko   Mehsoor    Kar    Diya

Be Taabion    Say    Chhup    Na    Saka   Maajara-e-Dil

Aakhir    Huzoor-e-Yaar    Bhi    Mazkoor    Kar    Diya

Ehl-e-Nazar   Ko    Bhi    Nazar    Aaya    Na    Roo-e-Yaar

Yaan   Tak    Hijaab-e-Yaar    Mastoor   Kar    Diya

HASRAT   Bahut    Hay    Martabaa-e- Aashiqi    Buland

Tujh    Ko   To    Muft   Logon    Nay    Mashoor    Kar    Diya

Poet: Hasrat    Mohani

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -