کیا کہوں کیا ہے مرے کشکول میں

کیا کہوں کیا ہے مرے کشکول میں
کیا کہوں کیا ہے مرے کشکول میں

  

کیا کہوں کیا ہے مرے کشکول میں

ترکِ دنیا ہے مرے کشکول میں

قیس اور لیلیٰ ہیں محمل میں سوار

اور صحرا ہے، مرے کشکول میں

جون! اب میں کچھ نہیں ہوں لا سوا

اب فقط لا ہے،مرے کشکول میں

وہ جو ہے ہاں اور نہیں کے درمیاں

بس وہی ’یا‘ ہےمرے کشکول میں

اے مغاں! بھر دو اسے یعنی کہ اک

ناف پیالہ ہے، مرے کشکول میں

شش جہت کی دھوپ ہے میرا نصیب

اور سایہ ہے،مرے کشکول میں

بول اے یوسف! جو سودا ہو قبول

اِک زلیخا ہے مرے کشکول میں

اب صداکوئی مرے لب پر نہیں

پر وہ لب وا ہے، مرے کشکول میں

ساری دنیا کاگدا پیشہ ہوں میں

ساری دنیا ہے، مرے کشکول میں

ہوں میں اک سائل مگر تیرے لیے

ایک پڑیا ہے، مرے کشکول میں

شاعر: جون ایلیا

Kia Kahun Kia Hay Miray Kashkol Men

Tark  e  Dunya Hay Miray Kashkol Men

Qais Aor Lela Hay Hen Mehmil Men Sawaar

Aor Sehra Hay Miray Kashkol Men

JAUN, Ab Main Kuch Nahen Hun LaSiwa

Ab Faqat Ilaa Hay Miray Kashkol Men

Wo Jo Hay Haan Aor Nahen K Darmiaan

Bass Wahi ''Yaa"Hay Miray Kashkol Men

Ay Mughaan, Bhar Do Usay Yaani Keh Ab

Naaf  e  Payaala Hay Miray Kashkol Men

Shash Jehat Ki Dhoop Hay Mera Naseeb

Aor Saaya Hay Miray Kashkol Men

Bol Ay YOUSAF Jo Soda Ho Qabool

Ik ZULAIKHA Hay Miray Kashkol Me

Ab Sdaa Koi Miray Lab Par Nahen

Par Wo Lab Waa Hay Miray Kashkol Men

Saari Dunya Ka Gadaa Pesha Hun Main

Saari Dunya Hay Miray Kashkol Men

Hun Main Ik Saail Magar Teray Liay

Aik Purrya Hay Miray Kashkol Men

Poet:Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -