ہو احمدِ خدا میں دل جو مصروفِ رقم میرا

ہو احمدِ خدا میں دل جو مصروفِ رقم میرا
ہو احمدِ خدا میں دل جو مصروفِ رقم میرا

  

ہو احمدِ خدا میں دل جو مصروفِ رقم میرا

الف الحمد کا سا بن گیا گویا قلم میرا

رہے نامِ محمد لب پہ یارب اول و آخر

اُلٹ جائے بوقتِ نزع جب سینہ میں دم میرا

محبتِ اہلبیتِ مصطفی کی نورِ برحق ہے

کہ روشن ہو گیا دل مثلِ قندیلِ حرم میرا

دکھائی مجھکو راہِ شرعِ اصحابِ پیمبر نے

چراغِ راہ ہے اکرامِ اصحابِ کرم میرا

کہیں شاہِ نجف کے عشق میں دل میرا ڈوبا ٹھا

کہ ہے دُرِ نجف ہو کر چمکنا دُرِ یم میرا

رہے گا دانہ افشاں مزرعِ امید بخشش میں

غمِ آلِ نبی سے ہر اشکِ نم میرا

شہِ بغداد کا خط غلامی ذوق رکھتا ہوں

نہ کیوں دل اس خطِ بغداد سے ہو جامِ جم میرا

شاعر: ابراہیم ذوق

(دیوانِ ذوق:مرتبہ انوارلحسن صدیقی؛سنِ اشاعت1957)

Ho AHMAD e KHUDA Men Dil Jo Masroof e Raqam Mera

Alif Alhamd ka Sa Ban Gaya Goya Qalam Mera

Rahay Nam e MUHAMMAD Lab Pe YA RAB Awwal o Aakhir

Ulat Jaaey Ba Waqt Nazaa Jab Seena Men Dam Mera

Muahbbat e EHLEBAIT e MUSTAFA Ki Noor e Bar Haq Hay

Keh Roshan Ho Gaya Dil Misl e  Qandeel  e Haram Mera

Dikhaai Mujh Ko Raah e Saraa e Ashaaba Paiambar nay

Charaagh e Rah Hay Ikraam e Asahaab e Karam Mera

Kaken Shah e Najaf K Eshq Men Dil Mera Dooba Tha

Keh Hay Dur e Nnajaf Ho Kar Chamakta Dur e Yam Mera

RahY Ga Daan Afshaan Mizra e Umeed Bakhshish Men

Ghame aal e NABI Say Daan e Har Ashk e Nam Mera

 

Shah e Baghdaad Ka Khat Ghulaami   ZAUQ Rakhta Hun

Na kiun Dil Iss Khat e Baghdaad Say Ho Jaam e Jam Mera

Poet: Ibrahim Zauq

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -