وہ کون ہے جو مجھ پہ تاسف نہیں کرتا

وہ کون ہے جو مجھ پہ تاسف نہیں کرتا
وہ کون ہے جو مجھ پہ تاسف نہیں کرتا

  

وہ کون ہے جو مجھ پہ تاسف نہیں کرتا

پر میرا جگر دیکھ کہ میں اف نہیں کرتا

کیا قہر ہے وقفہ ہے ابھی آنے میں اُ ن کے 

اور د م مرا جانے میں توقف نہیں کرتا

تا صاف کرے دل نہ مے، صاف سے صوفی

کچھ سود و صفا علمِ تصوف نہیں کرتا

دل فقر کی دولت سے مرا اتنا غنی ہے

دنیا کے زر و مال پہ میں تف نہیں کرتا

پڑھتا نہیں خط غیر مرا واں کسی عنوان

جب تک کہ عبارت میں تصرف نہیں کرتا

کچھ اور گماں گزرے نہ دم لیںترے کافر

یاد اس لیے میں سورۂ یوسف نہیں کرتا

اے ذوق تکلف میں ہے تکلیف سراسر

آرام سے وہ ہے جو تکلف نہیں کرتا

شاعر: ابراہیم ذوق

(دیوانِ ذوق:مرتبہ انوارلحسن صدیقی؛سنِ اشاعت1957)

Wo Kon Hay Jo Mujh Pe Taasuf Nahen Karta

Par Mera Jigar Dekh Main Uff Nahen Karta

Kay Qehr Hay ,Waqfa Hay Abhi Aanay Men Un K

Aor Dam Mera Jaanay Men Tawaqquf Nahen Karta

Taa Saaf Karay Dil Na May Saaf Say Sufi

Kuch Sood o Safaa Elm e Tasawuf Nahen Karta

Dil faqr Ki Dolat Say Mira Itna Gani Hay

Dunya K Zar o Maal Pe Main Tuff Tak Nahen Karta

Parrhta Nahen Khat Ghair Mira Waan Kisi Unwaan

Jab Tak Keh Ibaarat Men Tasarruf Nahen Karta

Kuch aor Gumaan Guzray Na dam Len Tiray Kaafir

Yaad Iss Liay main SURA e YOUSAF Nahen Karta

Ay Zouq Takalluf Men Hay Takleef Sarasar

Araam Say Wo Hay Jo Takalluf Nahen Karta

Poet: Ibrahim Zauq

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -