غمِ دل تو افتاد ہے اور کیا ہے | بہزاد لکھنوی |

غمِ دل تو افتاد ہے اور کیا ہے | بہزاد لکھنوی |
غمِ دل تو افتاد ہے اور کیا ہے | بہزاد لکھنوی |

  

غمِ دل تو افتاد ہے اور کیا ہے

مگر زیست برباد ہے اور کیا ہے

یہی چپکے چپکے مرے اشک بہنا

خموش ایک فریاد ہے اور کیاہے

بھلائے نہ بھولی وہ اول نگاہی

وہی ایک افتاد ہے اور کیاہے

تمنا سے پر ہو گیاگوشہ گوشہ

اسی سے دل آباد ہے اور کیا ہے

ہمیں تو بہارِ چمن ہی نے مارا

یہی رنگِ صیاد ہے اور کیاہے

کھلے لب تو گویا کلی مسکرائی

یہی حسنِ ارشاد ہے اور کیاہے

تصور مگر شرط ہے دیکھیے تو

یہی نقشِ بہزاد ہے اور کیاہے

شاعر: بہزاد لکھنوی

(شعری مجموعہ: وجد و حال ، سالِ اشاعت،1955 )

Gham-e- Dil     To    Uftaad    Hay   Aor    Kaya    Hay

Magar     Zeest    Barbaad    Hay   Aor    Kaya    Hay

Yahi     Chupkay    Chupkay    Miray    Ashk    Behna

Khmosh    Aik    Faryaad    Hay   Aor    Kaya    Hay

Bhulaaey    Na     Bhooli    Wo    Awwal   Nigaahi

Wahi    Aik     Uftaad    Hay   Aor    Kaya    Hay

Tamanna    Say   Pur    Ho    Gaya    Gosha    Gosha

Isi    Say    Dil    Abaad     Hay   Aor    Kaya    Hay

Hamen    To     Bahaar -e- Chaman    Hi     Nay    Maara

Yahi     Rang-e- Sayyaad     Hay   Aor    Kaya    Hay

Khulay   Lab    To   Goaya    Kali    Muskuraai

Yahi    Husn-e- Arshaad    Hay   Aor    Kaya    Hay

Tasawwar    Magar    Shart    Hay    Dekhiay   To

Yahi    Naqsh -e- BEHZAD    Hay   Aor    Kaya    Hay

Poet: Behzad    Lakhnavi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -