محبت میں کچھ کفر و ایماں نہیں ہے | بہزاد لکھنوی |

محبت میں کچھ کفر و ایماں نہیں ہے | بہزاد لکھنوی |
محبت میں کچھ کفر و ایماں نہیں ہے | بہزاد لکھنوی |

  

محبت میں کچھ کفر و ایماں نہیں ہے

گلی کون سی جائے ایماں نہیں ہے

سلامت رہے ان کے جلوؤں کی بارش

نگاہوں کا عالم پریشاں نہیں ہے

جبیں اے جبیں آ      گیا کوئے جاناں

یہاں بے نیازی کا امکاں نہیں ہے

یہ آنسو تو ہے عکسِ صبحِ تمنا

یہ تعبیرِ خوابِ پریشاں نہیں ہے

تہی جام اک میکدے میں ہوں میں ہی

یہ کیا ہے جو ساقی کا احساں نہیں ہے

یہ راز ایک رہبر نے مجھ کو بتایا

وہ منزل ہے آساں جو آساں نہیں ہے

میں بہزاد کیوں خود کو کافر سمجھ لوں

ان آنکھوں میں کیا میرا ایماں نہیں ہے

شاعر: بہزاد لکھنوی

(شعری مجموعہ: وجد و حال ، سالِ اشاعت،1955 )

Muhabbat    Men    Kuch    Kufr -o-Emaan    Nahen   Hay

Gali    Kon    Si     Koo-e- Janaan   Nahen   Hay

Salaamat    Rahay   Un     K   Jalwon    Ki    Baarish

Nigaahon    Ka     Aalam   Pareshaan    Nahen   Hay

Jabeen    Ay    Jabeen    Aa    Gaya    Koo-e- Janaan

Yahan     Benayaazi    Ka    Imkaan    Nahen   Hay

Yeh    Aansu    To    Hay    Aks-e-Subh-e- Tamanna

Yeh    Tabeer-e- Khaab-e- Pareshaan    Nahen   Hay

Tahi    Jaam    Ik    Maikaday    Men    Hun    Main   Hi

Yeh    Kaya    Hay    Jo    Saaqi    Ka    Ehsaan    Nahen     Hay

Yeh    Raaz    Aik    Rehbar    Nay    Mujh    Ko   Bataaya

Wo    Manzil    Hay    Asaan    Jo    Aasaan     Nahen     Hay

Main    BEHZAD    Kiun    Khud    Ko    Kaafir   Samajh    Lun

In    Aankhon     Men    Kaya     Mera    Emaan    Nahen   Hay

Poet: Behzad    Lakhnavi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -