ڈاکٹر صاحبزادہ  انوار احمد بگوی اور   ’ قلم قتلے‘ 

 ڈاکٹر صاحبزادہ  انوار احمد بگوی اور   ’ قلم قتلے‘ 
 ڈاکٹر صاحبزادہ  انوار احمد بگوی اور   ’ قلم قتلے‘ 

  

ڈاکٹر صاحبزادہ  انوار احمد بگوی کا شمار بلاشبہ ہمارے عہد کے  ان  دانشوروں میں کیا جا سکتا ہے جو  نہ صرف درد ِ  دل  رکھنے والے محب  ِ وطن انسان ہیں بلکہ اپنےاس  درد  میں گوندھے ہوئے  احساسات کو  سپرد  ِ قلم کرنے کا سلیقہ اور ہنر بھی جانتے ہیں۔آپ ایسے  لوگوں کو  انگلیوں پر گن سکتے ہیں جو مختلف  سرکاری مناصب پرفائز رہتےہوئے قومی ذمہ داریاں  ادا  کرتے،اس  قوم کے دکھ درد کو اپنا دکھ درد سمجھتے اور پھران تکالیف اور مسائل کو حل کرنے کے جویا بھی ہوں۔ہر سطح ،ہر موقع اور ہر حال میں حق  اور سچ  کا  بر ملا  اظہار  ان کی سرشت میں شامل ہےاور جہاں زبان سے کام چلتا ہو وہاں زبا ن کا استعمال اور جہاں قلم سے کام نکلتا ہو  وہاں  قلم سے کام  لیتے ہیں یہ قلم  کہیں،  تیر کا کام دیتا ہے اور کہیں نشتر کاجس سے ان کے حسن ِ معاملہ  اور ان کی حکمت و تدبر  کا  پتا  چلتا ہے۔عشروں  پر محیط ان سے تعلق  ِ  خاطر نے مجھے ان کے اس عوام  اور وطن دوست رویے نے اپنا  گرویدہ  بنالیاہے۔

بطور  سرکاری آفیسر انہوں نے  اپنے  فرائض ِ منصبی کسی روایتی آفیسر کی طرح نہیں  بلکہ ایک بہترین منتظم  اور کامیاب مصلح کے طورانجام  دیے ۔  ہیلتھ  پرووائڈراورمنتظم کی حیثیت میں انہوں  نےاپنی بہترین صلاحیتوں  کا  لوہا منوایا  اور  ان صلاحیتوں کےاعتراف کےطورپر متعدد ایوارڈزاور اعزازات سے نوازے گئے۔خوش آئند بات  یہ ہے کہ مندرجہ  بالااُمور کی  انجام دہی کےساتھ ساتھ انہوں نےقلم  و  قرطاس سےاپنا  رشتہ بھی  برقرار  رکھا۔

وہ  ایک  عرصہ  سے اپنے  زیر ادارت  شائع  ہونے والے جریدے  ماہنامہ ”شمس  الاسلام“  بھیرہ کے علاوہ  قومی اور بین الاقوامی سطح  کے حامل  اخبارات  و رسائل میں  علمی، ادبی،سیاسی،مذہبی اور سماجی موضوعات پر خامہ  فرسائی کرتے چلے  آ  رہے ہیں۔ ان کے   ’قلم  کا  سفر‘  ہنوز  جاری ہے۔اب تک بفضلہ  تعالیٰ  وہ  دس کےلگ بھگ کتب تصنیف  و  تالیف کرچکے ہیں۔ڈاکٹر انوار احمد بگوی کاسب سے بڑا کارنامہ  ’ تذکار  ِ بگویہ‘ کے  زیر عنوان پانچ  ضخیم  جلدوں  میں خاندان بگویہ کی علمی  ، اخلاقی، مذہبی، سماجی و سیاسی خدمات  پر مشتمل  تاریخ مرتب کرنا ہے،یہ وہ کام تھا  جو کسی تنظیم،ادارے  یا  ٹیم  کے کرنے  کا  تھا  لیکن  ڈاکٹر صاحب نے  تنِ تنہا  انجام  دیا  اور  اس حسن  اور خوبی کے ساتھ  انجام دیا کہ  سرخرو  ٹھہرے۔

اس کے علاوہ تاریخ  ِ  سرگودھا ، سفر نامہ  ایران  اور  اردو  اور  انگریزی  تحریروں  اور  مضامین پر مشتمل  کتاب  ’ قلم کا  سفر ‘  بھی  ان  کے کریڈٹ  پر ہیں۔  زیر  تبصرہ  کتاب  ’قلم  قتلے ‘  بھی  ان کے  مطبوعہ و  غیر مطبوعہ مضامین  پر مشتمل ہے  جس میں مختلف اور متنوع موضوعات  کا  احاطہ کیا گیا ہے۔  قارئین  کی آسانی کے لیےان مضامین کومختلف عنوانات کےتحت  ترتیب  دیاگیاہے۔ان میں ’ اپنے وطن  میں‘، ’ مذہبیات ‘،’تہذیب و معاشرت ‘،’سفر نامہ ازبکستان‘،     ’میری  رائے  کے مطابق‘،’کتابیں میری نظر میں‘،     ’صحت عامہ‘، ’پہاڑی کے چراغ ‘،’ادارتی  نوٹ ‘اورخصوصی  یعنی ’حج  بیت  اللہ کے  مہمان ‘  وغیرہ  شامل ہیں۔

ان  تمام تحریروں کا حسن  ان کا اسلوب  اور انداز  ِ بیاں ہے  جو سادہ ،سلیس،عام  فہم  اور  دلچسپ و  دل پذیر  اور دل  پر  اثر کر جانے والا ہے۔حقیقت یہ  ہے  کہ  ان  تحریروں میں  ہر  عمر  اور  ہر  مزاج کے  قاری  کی دلچسپی کا سامان بہ  تمام  و  کمال  اس میں موجود ہے۔اس کتاب کے مشمولات  میں  ان کے صاحبزادے  احمد منصور بگوی  کی خصوصی تحریر  ’ حج  بیت  اللہ کے  مہمان ‘اس  لحاظ  سے  اہمیت  کی  حامل ہے  کہ  اس میں  حج  بیت اللہ کے حوالے سے  نہ  صرف  ان  کے محسوسات  و  جذبات  اور  احوال  و واقعات  کو  قلمبند کیا گیا ہے  بلکہ عازمین ِ  حج  کی رہنمائی  کا  خوشگوار  فریضہ  بھی  ادا کیا  گیا ہے۔  اسی طرح  اس کتاب  میں معروف مفسر  ِ  قرآن ،علمی  اور  دینی شخصیت  مولاناامین  احسن  اصلاحی  ؒ  کی   حیات  و  خدمات ،  آثار  و  واقعات  کے  حوالے سے  ان  کی زیر ِ تالیف  کتاب  ’مدبرِ  قرآن ،  مولانا  امین  احسن اصلاحی ‘ کا  ایک  باب بھی ( تبرک  کے طورپر )  شامل کیا  گیا ہے جو  پڑھنے  کے  قابل ہے۔  اس  کے  علاوہ  اس مجموعہ مضامین  میں وسطی  ایشیائی ریاست  ازبکستان کا سفر  نامہ بھی  پڑھنے  سے  تعلق  رکھتا  ہے،اس  سفر  نامہ  کی  خوبی  یہ  ہے  کہ  اس  میں  متعلقہ  شہروں  کی  تاریخ ،  عمومی  حالات ،  شہریوں کی  بودو باش ، تہذیب  و  تمدن  کے بیان کے  علاوہ  تاریخی  مقامات  اور  آثار  ِ  قدیمہ  کے  بارے  میں  جزیات تک کو  اس  شگفتہ  اور ’ دل کھچویں‘ انداز سے  بیان  کیا  گیا ہے کہ ڈاکٹر  صاحب  کی قوت  مشاہدہ  پر بے  اختیار  داد دینے  کو  جی چاہتا ہے۔

انہوں نے بڑے من موہنے  انداز  میں سفر کے  واقعات  و حالا ت  قلمبند  کیے ہیں  اور  قاری کو  باقاعدہ  انگلی  پکڑ  کو  ان تاریخی مقامات  کی سیر  کرواتے  محسوس ہوتے ہیں۔ حقیقت  یہ ہے  کہ  اس سفر نامے  کو پڑھ  کر  اس  دور کے  جغادری  اہلِ  قلم  کے سفر  نامے  غیر  معیاری، پھسپھسے اور  پھیکے سے محسوس ہوتے ہیں کیونکہ ان  حضرات  کے  سفر  ناموں  میں  عمومی  طور پر  بہت  سے  غیر  ضروری  واقعات  اور  غیر  حقیقی  کردار  متعار ف کروائے  گئے  ہوتے ہیں جن  کا  عملاٍ کوئی  وجود  نہیں  ہوتا  لیکن محض  زیب  ِ  داستان  کے لیے  انہیں سفر نامے  کا حصہ  بنایا  گیا ہوتا ہے  ان من گھڑت  قصے،  کہانیوں کے ساتھ کسی  دوشیزہ  سے  ’ اتفا  قیہ‘  ملاقات  بھی  ان سفر ناموں کا  ’لازمہ ‘ قرار پاتا ہے۔اس  نوع  کے  ’مافوق الفطرت‘ قسم کے واقعات  قاری  کے ذوق  ِ مطالعہ کو  متاثر کرتے  اور  وہ  انہیں  پڑھتے  ہوئے  لطف  اندوز  ہونے  کے  بجائے انہیں  بوجھ  تصور کرتا  ہے۔

جب  کہ  اس کے  مقابلے  میں ڈاکٹر  انوار بگوی  کے سفر نامے میں  ’جو  دیکھا ،  جیسے دیکھا  اور جہاں دیکھا ‘ من  و  عن  بیان کر  دینے  کی صفت پائی  جاتی  ہے جنہیں ان  کی تحریر کی چاشنی خوش گوار  اور  دلچسپ  بنا  دیتی ہے۔سو  کہا  جا  سکتا ہے  کہ  مجموعی  طور  پر  اس کتاب  میں شامل  تمام تحریریں قاری کے  ذوق  ِ  مطالعہ کو  مہمیز  دینے  کے ساتھ ساتھ سوچ  کے  دریچے  وا  کرتیں  اور  غور  و  فکر  کے  لیے خوراک  کا سامان بھی مہیا  کرتی  ہیں  کیوں کہ  خون جگر  میں  انگلیاں  ڈبو  کر  لکھی  جانے  والی  تحریر  اپنی  ایک  تاثیر  رکھتی ہے  اور  یہ  کتاب  بلا  خوفِ    تردید  اپنے  اندر  اثر  آفرینی   رکھتی ہے  جسے  پڑھ  کر  ’ ھل  من  مزید‘ کی  طلب  دو  چند  ہوجاتی ہے۔

   امید  رکھنی چاہیے  کہ  ڈاکٹر  صاحب  موصوف اپنے  وہ  مضامین  جو  ’ قلم  کا  سفر ‘  اور  ’ قلم  قتلے ‘   میں  شائع  ہونے سے  رہ  گئے  ہیں  وہ اپنے  تیسرے  مجوعہ  مضامین  میں یکجا  کر  کے  قارئین  کو  دعوتِ مطالعہ  دیں  گے ۔

نوٹ:یہ بلاگر کا ذاتی نقطہ نظر ہے جس سے ادارے کا متفق ہونا ضروری نہیں ۔

مزید :

بلاگ -