میں جدید دور کی عورت ہوں |حنا شہزادی |

میں جدید دور کی عورت ہوں |حنا شہزادی |
میں جدید دور کی عورت ہوں |حنا شہزادی |

  

میں جدید دور کی عورت ہوں

میں جدید دور کی عورت ہوں

میں خود ہی روندتی اپنی عزت ہوں

میں نے عزت نفس کو کچل ڈالا

ٹک ٹوک پہ خود کو مشہور کر ڈالا

گھر گھر اب لگا یہ تماشا ہے

میں نے اپنا معیار گرایا ہے

میں اپنی تہذیب کو بھول گئی

پھر بھی گردن اکڑ کر جیتی گئی

میں نے سر سے دوپٹہ اتار دیا

اور لوگوں کو خود ہی اپنا گرویدہ کیا

میں ہمشہ شکایت کرتی رہی

ابنِ آدم کو غلط گردانتی رہی

کیا میں نے خود کبھی یہ سوچا ہے

کیا کبھی  خود کو میں نے چھپایا ہے

کیا عورت کا مطلب سمجھا ہے

نہیں! نہ میں نے اپنا آپ جانا ہے

نہ اسلام کا حکم مانا ہے

میں نے زمانہ جہالت کو اپنایا ہے

ہائے ستم!میں نے خود کو خود ہی لٹایا ہے

شاعرہ: حنا شہزادی

Main Jadeed Daor Ki Aorat Hun

Main    Jadeed   Daor   Ki Aorat   Hun

Main    Khud   Hi   Raondti   Apni   Izzat   Hun

Main   Nay   Ezzat-e  - Nafas   Ko   Kuchall   Diya

Ghar   Ghar   Ab   Laga   Yeh   Tamaasha   Hay

Main   Nay   Apna    Mayaar   Giraaya   Hay

Main   Apni   Tehzeeb   Ko   Bhool   Gai

Phir   Bhi   Gardan   Akarr   Kar   Jeeti   Gai

Main   Nay  Sar   Say  Dupatta   Utaar   Diya

Aor   Logon   Ko Khud   Hi   Apna   Garveeda   Kiya

Main   Hamesha   Shikaayat   Karti   Rahi

Ibn-e-Aadam   Ko   Ghalat   Gardaanti    Rahi

Kiya    Main   Nay   Khud   Kabhi   Yeh   Socha   Hay

Kaya   Kabhi    Khud   Ko   Main   Nay   Chhupaya   Hay

Kaya    Aorat   Ka    Matlab    Samjha   Hay

Nahen  , Na   Main    Nay   Apna    Aap   Jaan   Hay

Na   Islam   Ka    Hukm   Maana  Hay

Main   Nay   Zamaana -e- Jihaalat    Ko   Apnaaya   Hay

Haaey   Sitam  ,  Main   Nay   Khud   Ko   Khud   Hi   Lutaaya   Hay

Poetess: Hina   Shehzadi

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -