پیمانِ وفا نہ کر فراموش | حسرت موہانی |

پیمانِ وفا نہ کر فراموش | حسرت موہانی |
پیمانِ وفا نہ کر فراموش | حسرت موہانی |

  

پیمانِ وفا نہ کر فراموش

ٓاے حسرتِ بے قرار خاموش

دیوانۂ حسنِ پاک داماں

بے پردۂ دل میں عشق روپوش

اُس عشوۂ   نازنیں کے جلوے

ہیں دشمنِ عقل مصلحت کوش

پوشیدہ سکونِ یاس میں ہے

اِک محشرِ اضطرابِ خاموش

آزاد ہیں قید میں بھی حسرت 

ہم دل فدگانِ فراموش

شاعر: حسرت موہانی

(دیوانِ حسرت موہانی، حصہ اول: سال اشاعت،1918)

Paimaan-e-Wafa   Na   Kar    Faramosh

Ay   Hasrat-e-Beqaraar   Khamosh

Dewaana-e- Husn-e- Paakdamaan

Hay  Parda -e-Dil   Men    Eshq   Roposh

Uss   Ushwa-e-Naazneen    K   Jalway

Hen   Dushman -e-Aql    Maslihat   Kosh

Posheeda    Sakoon-e-Yaas   Men   Hay 

Ik    Mehshar -e-Iztaraab    Khamosh

Azaad   Hen    Qaid    Men    Bhi   HASRAT 

Ham   Dil    Fidgaan-e- Khud    Faramosh

Poet: Hasrat    Mohani

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -