ابھی سفر کا آغاز ہے | حنا شہزادی |

ابھی سفر کا آغاز ہے | حنا شہزادی |
ابھی سفر کا آغاز ہے | حنا شہزادی |

  

ابھی سفر کا آغاز ہے

ابھی منزلیں بہت دور ہیں

گر بھی گئے تو غم نہیں

یہ حوصلے بھی کم نہیں

ہر لمحہ تو مسکرائے جا

تو رنج و الم اٹھائے جا

تو غم نہ کر بھول جا

تو ہر چبھن کو جھیل جا

تو صبر کر غم نہ کر

اپنے عزم کو کبھی کم نہ کر

مانا یہ راستے دشوار ہیں

لیکن تیری جستجو بھی کمال ہے

کیا ہوا جو عزم نہیں

جینا بھی کوئی جرم نہیں

تو رہ رہا ہے اس دور میں

یہ بھی کوئی کم نہیں

تو اپنی وحشتوں کو تھام لے

اور لگا صدا اس دور میں

میں جی رہا ہوں اب تلک

یہ معجزے سے کم تو نہیں

شاعرہ : حنا شہزادی

Abhi    Safar   Ka    Aghaaz    Hay

Abhi   Manzlen   Bahut   Door   Hen

Gir   Bhi   Gaey   To   Gham   Nahen

Yeh   Haoslay   Bhi   Kam   Nahen

Har   Lamha   Tu    Muskraaey   Ja

Tu    Rang-o-Alam   Uthaaey   Ja

Tu   Gham   Na   Kar   Bhool   Ja

Tu   Har   Chubhan   Ko   Jhail   Ja

Tu    Sabr    Kar   Gham   Na   Kar

Apnay   Azm   Ko   Kabhi   Kam    Na   Kar

Maana   Yeh    Raastay   Dushwaar   Hen

Lekin   Trri    Justaju   Bhi   Kamaal   Hay

Kaya    Hua    Jo   Azm   Nahen

Jeena    Bhi    Koi    Jurm   Nahen

Tu    Raha    Hay   Iss    Daor   Men

Yeh    Bhi    Koi    Kam    Nahen

Tu    Apni    Wehshaton    Ko   Thaam   Lay

Aor   Lagaa   Sadaa    Iss    Daor   Men

Main   Ji   Raha   Hun   Ab   Talak

Yeh   Mojaazay   Say    Kam   Nahen

Poetess: Hina   Shehzadi

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -