تو کسی روز مرے گھر میں اُتر شام کے بعد

تو کسی روز مرے گھر میں اُتر شام کے بعد
تو کسی روز مرے گھر میں اُتر شام کے بعد

  

تو نے دیکھا ہے کبھی ایک نظر شام کے بعد

کتنے چپ چاپ سے لگتے ہے ہیں شجر شام کے بعد

اتنے چپ چاپ کہ رستے بھی رہیں گے لا علم

چھوڑ جائیں گے کسی روز نگر شام کے بعد

میں نے ایسے بھی گناہ تیری جدائی میں کیے

جیسے طوفاں میں کوئیچھوڑ دے گھر شام کے بعد

شام سے پہلے وہ مست اپنی اڑانوں میں رہا

جس کے ہاتھوں میں تھے ٹوٹے ہوئے پر شام کے بعد

رات بیتی تو گنے آبلے اور پھر سوچا

کون تھا باعثِ آغاز سفر شام کے بعد

تو ہے سورج تجھے معلوم کہاں رات کا دکھ

تو کسی روز مرے گھر میں اُتر شام کے بعد

لوٹ آئے نہ کسی روز وہ آوارہ مزاج

کھول رکھتے ہیں اسی آس پہ در شام کے بعد

 فرحت عباس شاہ

                              Tu Nay Dekha Hay Kabhi Aik nazar Shaam KBaad

Kitnay Chup Chaap Say Lagtay Hen Sahjar Shaam K Baad

                     Itnay Chup Chaap Keh Rastay Bhi Rahen Gay La Ilm

                                         Chorr Jaaen Gay Kisi Roz Nagar  Shaam K Baad

  ٘                          Main Nay Aisay Bhi Gunah Teri Judaaee Men Kiay

                 Jesay Tufaan men Koi Chorr Day Ghar Shaam K Baad

                Shaam Say Pehlay Wo Mast Apni Urraanon Men Raha

   Jiss K Haathon Men Thay Tootay Huay Par Shaam K baad 

                                                            Raat Beeti To Ginay Aablay aor Phir Socha

                                        Kon Tha Baais  e  Aghaaz  e  Safar Shaam K Baad

                          Tu Hay Sooraj Tujhay maloom kahan Raat Ka Dukh

                                     Tu Kisi Roz Miray Ghar Men Utar Shaam K baad

                                                              Laot Aaey na Kisi Roz Wo Awaara Mizaaj

                                       Khol Rakhtay Hen Isi Aas Pe Dar Shaam K baad

                                                                                                                                                      FarhatAbbas Shah

https://dailypakistan.com.pk/20-Sep-2020/1186449

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -