قیدیوں سے موبائل فون برآمد ہونے پر 4سپرنٹنڈنٹ اور 2ڈپٹی سپرنٹنڈنٹوں کیخلاف ریفرنس ارسال

قیدیوں سے موبائل فون برآمد ہونے پر 4سپرنٹنڈنٹ اور 2ڈپٹی سپرنٹنڈنٹوں کیخلاف ...

  

 لاہور(کرائم رپورٹر) پنجاب کی جیلوں میں سرچ آپریشن کے دوران سنگین مقدمات میں ملوث قیدیوں سے موبائل فون برآمد ہونے پر 4سپرٹنڈنٹ اور دو ڈپٹی سپرٹنڈنٹ جیل کے خلاف پیڈا ایکٹ 2006کے تحت کاروائی کے لیے ریفرنس سیکرٹری داخلہ پنجاب کو بھجوا دئے گئے ہیں ۔ذرائع کے مطابق یہ ریفرنس سپرٹنڈنٹ ڈسٹرکٹ جیل ملتان آصف عظیم ،سپرٹنڈنٹ سنٹرل جیل میانوالی ساجد بیگ ، سپرٹنڈنٹ جیل شیخوپورہ اصغر علی ، سپرٹنڈنٹ ویمن جیل امبر نقوی ، ڈپٹی سپرٹنڈنٹ ڈسٹرکٹ جیل میانوالی علی اکبر اور ڈپٹی سپرٹنڈنٹ جیل ملتان جاوید اقبال کھچی کے خلاف بھیجے گئے ہیں ۔ذرائع کا مزید کہنا ہے کہ آئی جی جیل خانہ جات نے نااہلی اور محکمانہ ڈیوٹی کے دوران سنگین غفلت کا مرتکب ہونے پر ان افسران کے خلاف فرد جرم عائد کر کے ان کے خلاف ریفرنس سیکرٹری داخلہ پنجاب کو بھجوا دئے ہیں ۔ریفرنس میں ان افسران کے خلاف پیڈا ایکٹ2006 کے تحت سخت کارروائی کی سفارش کی گئی ہے۔اس حوالے سے ہوم سیکرٹری پنجاب کی طرف سے انکوائری کمیٹی بنائی گئی ہے جس کی رپورٹ کے بعد مذکورہ افسران کے خلاف کارروائی عمل میں لائی جائے گی ۔ ذرائع کے مطابق آئی جی جیل خانہ جات میاں فارق نذیر نے ڈسٹرکٹ جیل ملتان ، سنٹرل جیل میانوالی ، وویمن جیل ملتان میں جبکہ ڈی آئی جی ہیڈ کوارٹر میاں سالک جلال اور ایڈیشنل سیکرٹری ہوم (پرزنر) نے شیخوپورہ جیل میں اچانک سرچ آپریشن کر کے قیدیوں سے موبائل فونز برآمد کر کے ان افسروں کے خلاف رپورٹس مرتب کیں ہیں ۔

مزید :

علاقائی -