نہیں کہنے کے قابل ہمصفیرو!داستاں میری | ادا جعفری |

نہیں کہنے کے قابل ہمصفیرو!داستاں میری | ادا جعفری |
نہیں کہنے کے قابل ہمصفیرو!داستاں میری | ادا جعفری |

  

نہیں کہنے کے قابل ہمصفیرو!داستاں میری

کہ دستِ برق نے ڈالی بنائے آشیاں میری

مرے صیاد! کچھ تو رحم کر ان چار تنکوں پر

یہی لے دے کے ہے کل کائناتِ آشیاں میری

تمہیں اے بجلیو! پہلے مجھی کو پھونک دینا تھا

جلانا تھی اگر منظور شاخِ آشیاں میری

مرا حالِ زبوں کیوں درسِ عبرت ہو زمانہ کو

زباں زد کس لیے ہو داستانِ آشیاں میری

نہ ہوتا خانماں تو خانماں برباد کیوں ہوتی

اداؔ یہ رنگ لائی آرزوئے آشیاں میری

شاعرہ: ادا جعفری

(شعری مجموعہ:میں ساز ڈھونڈتی رہی،سالِ اشاعت1982)  

Nahen Kehnay K Qaabil Hamsafeero!Daastaan Mrei

Keh Dast -e- Barq Nay Daali Binaa -e- Aashyaan Meri

Miray Sayyaad ! Kuch To Rehm Kar In Char Tinkon Par

Yahi Lay Day K Hay Kull Kaainaat-e- Ashyaan Meri

 

Tumheen Ay Bijlio! Pehlay Mujhi Ko Phoonk Dena Tha

Jalaana Thi Agar Manzoor Shaakh-e- Aashyaan Meri

Mira Haal -e- Zabun Kiun Dars -e- Ibrat Ho Zamaana Ko

Zubaan Zad Kiss Liay Ho Daastaan -e- Aashyaan Meri

 

Na Hota Khanuman To Khanuma Barbaad Kiun Hoti

ADA Yeh Rang Laai  Aarzu -e- Ashyaan Meri

 

Poetess: ADa  Jafri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -