ہونٹوں پہ کبھی ان کے مرا نام ہی آئے | ادا جعفری |

ہونٹوں پہ کبھی ان کے مرا نام ہی آئے | ادا جعفری |

  

ہونٹوں پہ کبھی ان کے مرا نام ہی آئے

آئے تو سہی بر سرِ الزام ہی آئے

حیران ہیں، لب بستہ ہیں، دل گیر ہیں غنچے

خوشبو کی زبانی تیرا پیغام ہی آئے

لمحاتِ مسرت ہیں تصوّر سے گریزاں

یاد آئے ہیں جب بھی غم و آلام ہی آئے

تاروں سے سجالیں گے رہ شہرِ تمنا

مقدور نہیں صبح ، چلو شام ہی آئے

کیا راہ بدلنے کا گلہ ہم سفروں سے

جس راہ سے چلے تیرے در و بام ہی آئے

تھک ہار کے بیٹھے ہیں سرِ کوئے تمنا

کام آئے تو پھر جذبۂ نام ہی آئے

باقی نہ رہے ساکھ ادا دشتِ جنوں کی

دل میں اگر اندیشہ انجام ہی آئے

شاعرہ: ادا جعفری

(شعری مجموعہ:شہرِ درد،سالِ اشاعتِ دوم،1982)  

Honton    Pe    Kabhi    Un    K    Mera    Naam   Hi   Aaey

Aaey    To    Sahi    Bar    Sar -e-Ilzaam    Hi    Aaey

Hairaan    Hen, Lab    Basta    Hen  ,    Dilgeer    Hen    Gunchay

Khushbu    Ki   Zubaani    Tera    Paighaam    Hi    Aaey

Lamhaat -e- Musarrat     Hen    Tasawwar   Say    Guraizaan

Yaad   Aaey    Hen    Jab   Bhi   Gham -o- Aalaam    Hi    Aaey

Taaron    Say    Saja    Len    Gay    Rah -e-    Sheh -e- Tamanna

Maqdoor    Nahen    Subho , Chalo    Shaam     Hi    Aaey

Kaya    Raah    Badalnay    Ka     Gila    Ham    Safron   Say

Jiss    Raah    Say    Chalay    Teray    Dar -o-Baan    Hi    Aaey

Thak     Haar     K    Bethay    Hen    Sar -e- Koo -e- Tamanna 

Kaam    Aaey     To      Phir    Jazba -e- Naam    Hi    Aaey

Baaqi    Na     Rahay     Saakh     ADA    Dasht -e- Junun    Ki

Dil    Men    Agar    Andesha -e-Anjaam    Hi    Aaey

Poetess: Ada   Jafri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -