میں اپنی ذات نہ اپنے مکاں میں رہتی ہوں | ریحانہ قمر |

میں اپنی ذات نہ اپنے مکاں میں رہتی ہوں | ریحانہ قمر |
میں اپنی ذات نہ اپنے مکاں میں رہتی ہوں | ریحانہ قمر |

  

میں اپنی ذات نہ اپنے مکاں میں رہتی ہوں 

دھوئیں کا پھول ہوں آتش فشاں میں رہتی ہوں 

کرم ہے اس کا جو دیتا ہے شکر کے موقعے 

کرم ہے اس کا جو میں امتحاں میں رہتی ہوں 

یہ وصل بھی ہے کسی اور جستجو جیسا 

کسی کے پاس کسی کے گماں میں رہتی ہوں 

مری بہار ابھی لوٹ کر نہیں آئی 

میں خشک پیڑ ہوں اور گلستاں میں رہتی ہوں 

مرے معاملے پہ ایسے چپ ہوئے ہیں لوگ 

یہ لگ رہا ہے کہ میں رفتگاں میں رہتی ہوں 

مرے قبیلے کو عادت ہے کار و کاری کی 

میں اس کے خوف سے دارالاماں میں رہتی ہوں 

قمرؔ   جو بگڑا ہوا ہے مزاج دریا کا  

اسے پتا ہے میں کچے مکاں میں رہتی ہوں 

شاعرہ: ریحانہ قمر

Main   Apni   Zaat   Na   Apnay   Makaan   Men   Rehti   Hun

Dhuen   Ka    Phool   Hun    Aatish   Fashaan   Men   Rehti   Hun

 Karam   Hay   Uss   Ka   Jo   Deta   Hay   Shukr   K   Moqay

Karam   Hay   Uss   Ka   Jo   Main   Imtihaan   Men   Rehti   Hun

 Yeh   Wasl   Bhi   Hay   Kisi   Aor   Justujoo   Jaisa 

Kisi   K    Paas   Kisi    Makaan   Men   Rehti   Hun

 

Miri   Bahaar    Abhi   Laot   Kar    Nahen   Aai

Main   Khushk    Pairr    Hun    Aor   Gulistaan  Men   Rehti   Hun

 Miray    Muaamlay   Pe    Aisay    Chup   Huay    Hen   Log

Yeh   Lag    Raha    Hay    Keh    Main   Raftagaan   Men   Rehti   Hun

 Miray   Qabeelay   Ko    Aadat    Hay   Kaarokaari   Ki

Main   Iss   K   Khaof   Say   Darul   Amaan   Men   Rehti   Hun

 QAMAR   Jo   Bighrra   Hua   Hay   Mizaaj  Darya   Ka

Usay   Pata   Hay   Main   Kachhay   Makaan   Men   Rehti   Hun

Poet: Rehana Qamar

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -