ناخوشگوار بیانات

ناخوشگوار بیانات
ناخوشگوار بیانات

  

 پاکستان میں حالات کیسے بھی ہوں افواج پاکستان نے ہمیشہ اپنی بہترین خدمات کے ذریعے ملک کو ان مسائل سے نکالا ہے خواہ بھارت کی جارحیت ہو یا زلزلہ و سیلاب کی آفت ہر ایک نے دیکھا کہ پاکستان آرمی ہر موقع پر قوم کے شانہ بشانہ کھڑی نظرآئی گزشتہ چند برسوں سے پاکستانی افواج ایک بار پھر ایسی ہی صورتحال سے دوچار ہیں کہ انہیں کالعدم تحریک طالبان پاکستان کے خلاف ایک ایسی جنگ لڑنی پڑرہی ہے جس کا تعلق براہ راست ملک کی سالمیت سے ہے کیوں کہ تحریک طالبان کی آڑ میں بیشمار غیرملکی ایجنسیاں متحرک ہیں جو اسلام کے نفاذ کے نام پر ملک کو عدم استحکام کا شکار کررہی ہیں جس کا ثبوت کئی بار ہماری سیکیورٹی ایجنسیوں کو اس وقت ملا جب مرنے والے ان شرپسندوں کے قبضے سے ہمارے دشمن ممالک کا اسلحہ اور پاسپورٹ ملے بہرحال ہماری فورسز نے سوات اور وزیرستان میں کامیابی سے طالبان کا مقابلہ کیا اور انہیں یہاں سے باہر نکال دیا۔

 ان ملک دشمنوں کے خلاف جنگ جاری ہی تھی کہ اس کے سربراہ حکیم اللہ محسود کے ایک ڈرون حملے میں مارے جانے کے بعد ایک نئی اور افسوسناک بحث کااس وقت آغاز ہوگیا جب مولانا فضل الرحمٰن کا یہ بیان سامنے آگیا جس میں انہوں نے حکیم اللہ محسود کو شہید قراردے دیا اور ساتھ ہی یہ بھی کہہ دیا کہ امریکہ اگر ایک کتے کو بھی مارے گا تو میں اسے شہید ہی کہوں گا ان کے اس بیان پر قوم کو بہت حیرانی ہوئی کیوں کہ عام طور پرمولانا صاحب ایک بہت مدبر سیاست دان کے طور پر پہچانے جاتے ہیں لیکن ان کے اس بیان نے بہت سے سوالات کو جنم دیا ہے قوم مولانا سے یہ پوچھتی ہے کہ وہ یہ بات کہہ کر کس اسلام کی خدمت کررہے ہیں کیوں کہ جو اسلام ہم نے پڑھا ہے اور بچپن سے لے کر اب تک اسلام کی جو تعلیمات ہم نے سنی اور سمجھی ہیں اس کے مطابق تو اسلام ایک مسلمان تو کیا ایک بے گناہ غیرمسلم کی جان لینے کو بھی بیت اللہ کو شہیدکرنے سے بڑا گناہ قراردیتا ہے تو ایسے میں مولانا کو وہ حکیم اللہ محسودمعصوم اور شہید نظرآرہاہے جس کے ہاتھوں ہزاروں بے گناہ عام شہری جاں بحق ہوئے ،جس نے ہماری افواج اور پولیس افسران کو کھلے عام نشانہ بنایا جس نے درباروں ،مسجدوں اور امام بارگاہوںپر حملے کروائے جس نے فوج کے انتہائی قابل افسر کرنل امام کو اپنے ہاتھوں سے گولیاں مارکر شہید کیا۔

دوسری بات یہ کہ مولانا کو اگر امریکہ سے اتنی ہی نفرت ہے کہ وہ اس کے ہاتھوں مرنے والے کتے کو بھی شہید کا درجہ دے رہے ہیں تو ان کی امریکہ سے یہ نفرت اس وقت کہاں چلی جاتی ہے جب اقتدار کی باری آتی ہے میرا اشارہ وکی لیکس کی اس رپورٹ کی طرف ہے جس میں انکشاف کیا گیا تھا کہ مولانا صاحب نے نومبر2007ءمیں ایک عشائیے کے دوران امریکی سفیر این پیٹرسن سے اپیل کی کہ وہ انہیں وزیراعظم بنانے کیلئے مدد کریں ۔خیرابھی یہ بحث جاری ہی تھی کہ جماعت اسلامی کے سربراہ جناب منورحسن نے دہشتگردی کے خلاف جنگ میں پاکستانی فوجیوں کے شہید ہونے پر سوال اٹھادیا جس پر پاک فوج کے ترجمان ادارہ آئی ایس پی آر نے اپنے ردعمل میں اس بیان کی شدید مذمت کرتے ہوئے بیان واپس لینے اور منورحسن سے معافی کا مطالبہ کیا لیکن جماعت اسلامی نے معافی مانگنے سے انکارکردیااور کہاکہ فوج کو سیاسی معاملات میں مداخلت نہیں کرنی چاہئے ۔

میرا جناب منور حسن صاحب سے بھی بڑے ادب سے سوال ہے کہ وہ ایمانداری سے بتائیں کہ پاک فوج نے جتنی بار بھی اقتدار پر قبضہ کیا ہے کیا اس کی دعوت خود سیاستدانوں کی حرکات نے نہیں دی اور کیا منورحسن صاحب یہ بتانا پسند کریں گے کہ کیا ان کی اپنی جماعت ضیاءالحق اور پرویز مشرف کو سپورٹ نہیں کرتی رہی ؟اگر فوج کو سیاست میں آنے کا حق نہیں تو انہوں نے اس وقت ان فوجی ڈکٹیٹروں کی سیاست میںمداخلت کو برداشت کیوں کیا ؟ کیا اس کی وجہ یہ نہیں کہ اس وقت خود اس جرم میں شامل تھے اور اب ان کو فوج کی سیاسی معاملات میں مداخلت بری لگ رہی ہے کہ اب وہ خود اقتدار سے باہر ہیں ؟میں منور حسن صاحب سے یہ سوال بھی پوچھنا چاہتا ہوں کہ جماعت اسلامی کے سابق امیر جناب قاضی حسین احمد مرحوم نے تو تحریک طالبان پاکستان کو ظالمان کا ٹولہ کہا تھالیکن آج منور حسن صاحب کیوں انہی کی حمائت کررہے ہیں ؟میری مولانا فضل الرحمٰن اور منورحسن صاحب سے گزارش ہے کہ وہ اپنے دئیے بیانات واپس لیں اس معاملے پر پیدا ہونے والی کنفیوژن ختم کریں اسی میں ملک وقوم کی بہتری ہے۔    ٭

مزید :

کالم -