سپریم کورٹ، 8سالہ بچی سے بداخلاقی کے مجرم کی اپیل مسترد، سزائے موت برقرار 

  سپریم کورٹ، 8سالہ بچی سے بداخلاقی کے مجرم کی اپیل مسترد، سزائے موت برقرار 

  

 ملتان  (نیٹ نیوز)سپریم کورٹ آف پاکستان نے 8سال کی بچی سے بداخلاقی کے مجرم کی سزائے موت کیخلاف اپیل کا فیصلہ جاری کر دیا سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں 8 سالہ بچی سے بداخلاقی کے مجرم علی حیدر عرف پپو کی اپیل مسترد کر تے ہوئے سزائے موت برقرار رکھی سپریم کورٹ نے ہدایت کی ہے کہ کیمیکل معائنے سے متعلق حکومت فوجداری قانون کے سیکشن 510 میں ترمیم کرے 9 صفحات پر مشتمل فیصلہ جسٹس سید منصور علی شاہ نے تحریر کیا سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں حکم دیا ہے کہ کیمیکل معائنے سے متعلق قانون میں ترمیم کی جائے حکومت ہر (بقیہ نمبر16صفحہ6پر)

سرکاری فرانزک رپورٹ کو قبول کرنے کا عمل روک دے سپریم کورٹ نے حکم دیا ہے کہ بداخلاقی اور قتل میں صرف ڈی این اے رپورٹ کو بطور قابلِ قبول شہادت استعمال کیا جائے قانون میں ترمیم کیلئے فیصلے کی کاپی قانون اور پارلیمانی امور کی وزارتوں کو دی جائے سپریم کورٹ آف پاکستان نے 8سالہ بچی سے بداخلاقی کے مجرم وہاڑی کے رہائشی علی حیدر عرف پپو کی اپیل مسترد کر دی جبکہ سزائے موت کا فیصلہ برقرار رکھا ہے۔

اپیل مسترد

مزید :

ملتان صفحہ آخر -