شکستِ شوق کو تکمیلِ آرزو کہیے| علی سردار جعفری |

شکستِ شوق کو تکمیلِ آرزو کہیے| علی سردار جعفری |
شکستِ شوق کو تکمیلِ آرزو کہیے| علی سردار جعفری |

  

شکستِ شوق کو تکمیلِ آرزو کہیے

جو  تشنگی ہو تو    پیمانہ و  سبو کہیے

خیالِ یار کو دیجے وصالِ یار کا نام

شبِ فراق کو گیسوئےمشک بو  کہیے

شکایتیں بھی بہت ہیں حکایتیں بھی بہت

مزہ تو جب ہے کہ یاروں کے روبرو کہیے

زبانِ تیغ سے کرتے ہیں پرسشِ احوال

اور اس کے بعد یہ کہتے ہیں آرزو کہیے

کسی کے نام پہ سردار کھو چکے جسے

اِسی کو اہلِ تمنا   کی آبرو   کہیے

شاعر: علی سردار جعفری

(مجموعۂ کلام:ایک اور خواب؛سالِ اشاعت۔1965 )

Shikast-e-Shoq   Ko   Takmeel-e-Aarzu     Kahaiay

Jo   Tashnagi   Ho   To   Paimaana-o- Subu   Kahaiay

Khayaal-e-Yaar    Ko   Dijiay   Visal-e-Yaar   Ka   Naam

Shab-e-Firaaq    Ko   Gaisu-e-Mushkbu   Kahaiay

Shikaayaten To    Bahut    Hen    Kaqaayaten    Bhi   Bahut

Maza   To   Jab   Hay    Keh   Yaaron    K    Rubaru   Kahaiay

Zubaan-e-Taigh   Say    Katray    Hen   Pursish-e-Ahwaal

Aor    Uss   K    Bad   Yeh   Kehtay   Hen   Aaru    Kahaiay

Kisi    K    Naam    Pe    SARDAR   Kho    Chukay    Hen   Jisay

Isi   Ko   Ehl-e-Tamana    Ki    Aabru     Kahaiay

Poet: Ali   Sardar   Jafri

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -