میں جہاں تک تم کو بلاتا ہوں وہاں تک آؤ | علی سردار جعفری |

میں جہاں تک تم کو بلاتا ہوں وہاں تک آؤ | علی سردار جعفری |
 میں جہاں تک تم کو بلاتا ہوں وہاں تک آؤ | علی سردار جعفری |

  

میں جہاں تک تم کو بلاتا ہوں وہاں تک آؤ

میری نظروں سے گزر کر دل و جاں تک آؤ

پھر یہ دیکھو کہ زمانے کی ہوا ہے کیسی

ساتھ میرے مرے فردوس جواں تک آؤ

حوصلہ ہو تو اُڑو میرے تصور کی طرح

میری تخیل کے گلزارِ جناں تک آؤ

لو وہ صدیوں کے جہنم کی حدیں ختم ہوئیں

اب ہے فردوس ہی فردوس جہاں تک آؤ

چھوڑ کر وہم و گماں حسنِ یقیں تک پہنچو

پر یقیں سے بھی کبھی وہم و گماں تک آؤ

اسی دنیا میں دکھا دیں تمہیں جنت کی بہار

شیخ جی تم بھی ذرا کوئے بتاں تک آؤ

شاعر: علی سردار جعفری

(مجموعۂ کلام:ایک اور خواب؛سالِ اشاعت۔1965 )

Main     Jahan   Tak   Tum   Ko   Bulaata   Hun    Wahan   Tak   To   Aao

Meri   Nazron   Say   Guzar   Kar   Dil-o-Jan   Tak   To   Aao

Phir   Yeh    Dekho    Keh   Dunya   Ki   Hawa   Hay  Kaisi

Saath   Meray    Miray    Firdous-e-Jawaan   Tak   To   Aao

Hosla   Ho   To   Urro   Meray   Tasawwar   Ki    Tarah

Meri  Takhayyal    K   Gulzar-e-Jinaan   Tak   To   Aao

Lo   Wo   Sadiyon   K    Jahannam   Ki   Haden    Khatm   Huen

Ab   Hay   Firous   Hi   Firdous   Jahan   Tak   To   Aao

Chorr    Kar   Wehm-o-Gumaan   Husn-e-yaqeen   Tak   Pahuncho

Par   Yaqeen   Say   Bhi   Kabhi   Gumaan   Tak   To   Aao

Isi   Dunya   Men   Dikhaa   Den    Tumhen   Jannat    Ki   Bahaar

Shaikh   Ji   Tum   Bhi   Zara   Koo-e-Butaan   Tak   To   Aao

Poet: Ali   Sardar   Jafri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -