کام اب کوئی نہ آئے گا بس اک دل کے سوا| علی سردار جعفری |

کام اب کوئی نہ آئے گا بس اک دل کے سوا| علی سردار جعفری |
کام اب کوئی نہ آئے گا بس اک دل کے سوا| علی سردار جعفری |

  

کام اب کوئی نہ آئے گا بس اک دل کے سوا

راستے بند ہیں سب کوچۂ قاتل کے سوا

باعثِ رشک ہے تنہا رویِ رہروِ شوق

ہم سفر کوئی نہیں دوریِ  منزل کے سوا

ہم نے دنیا کی ہر اک شے سے اُٹھایا دل کو

لیکن ایک شوخ کے ہنگامۂ محفل کے سوا

تیغِ منصف ہو جہاں دار و رسن ہوں شاہد

بے گنہ کون ہے اس شہر میں قاتل کے سوا

جانے کس رنگ سے آئی ہے گلستاں میں بہار

کوئی نغمہ ہی نہیں شورِ سلاسل کے سوا

شاعر: علی سردار جعفری

(مجموعۂ کلام:ایک اور خواب؛سالِ اشاعت۔1965 )

Kaam   Ab   Koi   Na   Aaey   Ga   Bass   Ik   Dil   K   Siwa

Raastay   Band   Hen   Sab   Koocha-e-Qaatil   K   Siwa

Baais-e-Rashq   Hay   Tanha   Ravi-e- Rahro-e-Shaoq

Ham   Safar   Koi   Nahen   Doori-e-Manzil   K   Siwa

Ham    Nay    Dunya   Ki    Har   Ik   Shay   Say    Uthaaya   Dil   Ko

Lekin   Ik   Shokh   K   Hangaama-e-Mehfil   K   Siwa

Taigh-e-Munsif   Ho   Jahan , Daar-o-Rasan   Hon   Shayad

Be   Gunah   Kon   Hay   Iss    Shehr   Men   Qaatil   K   Siwa

Jaanay   Kiss   Rang   Say   Aai    Hay    Gulistaan   Men   Bahaar

Koi    Naghma   Hi    Nahen   Shor-e-Salaasil   K   Siwa

Poet: Ali   Sardar   Jafri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -