حضورِ دوست بھی آیا نہیں قرار مجھے| غلام حسین ساجد |

حضورِ دوست بھی آیا نہیں قرار مجھے| غلام حسین ساجد |
حضورِ دوست بھی آیا نہیں قرار مجھے| غلام حسین ساجد |

  

حضورِ دوست بھی آیا نہیں قرار مجھے

بہت کیا مری وحشت نے شرمسار مجھے

اُتر رہی ہے سیاہی مری رگ و پے میں 

کسی چراغ کا رہتا ہے انتظار مجھے

کسی کی پھول سی آنکھوں میں دیکھنے کے بعد

نہیں رہا گلِ حیرت پہ اعتبار مجھے

بھٹک رہا ہوں مگر کھو نہیں سکا اب تک

ابھی بھلا نہیں پایا ہے کردگار مجھے

نگار خانۂ انوار میں اُترتے ہوئے 

کیا ہے کون سی صورت نے پھرشکار مجھے

بلا رہی ہے مجھے آبِ آئنہ ساجد

کہ اپنے آپ پہ آنے لگا ہے پیار مجھے

شاعر: غلام حسین ساجد

(مجموعۂ کلام:ہست و بود؛سالِ اشاعت۔2018 )

Huzoor-e-Dost    Bhi    Aaya    Nahen   Qaraar     Mujhay

Bahut   Kaya   Miri    Weshat   Nay  Sharmsaar   Mujhay

Utar    Rahi   Hay  Siyaahi   Miri    Rag-o-Pay   Men

Kisi    Charaagh   Ka   Rehta   Hay   Intezaar     Mujhay

Kisi   Ki    Phool    Si   Aankhon   Men   Dekhnay   K   Baad

Nahen   Raha   Gul-e-Hairat    Pe   Aitbaar   Mujhay

Bhatak   Raha   Hun   Magar   Kho   Nahen   Saka    Ab   Tak

Abhi   Bhulaa   Nahen   Paaya   Hay   Kirdigaar   Mujhay

Nigaar   Khaana -e-Anwaar   Men   Utartay   Huay

Kiya   Hay   Kon   Si   Soorat    Nay   Phir   Shikaar   Mujhay

Bula   Rahi   Hay   Mujhay   Aab-e-Aaina   SAJID

Keh   Apnay   Aap   Say   Aanay   Laga   Hay   Piyaar    Mujhay

Poet: Ghulam    Hussain   Sajid

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -