چین میں عید کی خوشیاں

چین میں عید کی خوشیاں
چین میں عید کی خوشیاں

  

دنیا کے دیگر ممالک کی طرح چین میں بسنے والے مسلمان بھی عید الاضحیٰ روایتی مذہبی جوش و خروش کے ساتھ منا رہے ہیں۔رواں برس پاکستان سے ایک روز قبل چین میں عید منائی گئی اور چین بھر میں رہنے والے پاکستانیوں نے جہاں قربانی کا فریضہ ادا کیا وہاں مختلف شہروں میں ایک ساتھ مل کر خوشیاں منائیں اور سماجی میڈیا پر ایک دوسرے کے لیے نیک تمناوں کا اظہار بھی کیا ، جو ہماری ثقافت کی ایک خوبصورت روایت ہے۔پاکستان اور  دیگر دنیا کی طرح یہاں بھی عید کے خوبصورت رنگوں میں ہر عمر کے افراد "رنگ" جاتے ہیں اور اجتماعی خوشی کا ایک خوبصورت احساس ہوتا ہے۔حالیہ برسوں میں بیجنگ میں قیام کے دوران چین کے مختلف حصوں میں عید منانے کے متعدد مواقع ملے اور ہر علاقے کی مقامی ثقافت کے ساتھ ساتھ اسلامی تہذیب و تمدن کو بھی قریب سے دیکھنا اور سمجھنا زبردست تجربہ رہا۔دو ہزار پندرہ میں پہلی مرتبہ عید الاضحیٰ چین کے صوبہ فوجیان کے شہر چھوان جو میں منائی تو  وہاں کے دیہی علاقوں میں رہنے والے مسلمانوں سے ملاقات کے دوران ان کے حالات زندگی اور خوشحالی دیکھ کر اچھا لگا۔مسلم اکثریتی دیہی علاقے میں تعمیر و ترقی  کا مشاہدہ اس لحاظ سے الگ رہا کہ آپ یہ فرق نہیں کر سکتے ہیں کہ یہ شہری علاقہ ہے یا دیہی۔

اب اگر دیگر شہروں  سے رخ کریں  بیجنگ کا تو یہاں چونکہ پاکستانیوں کی ایک بڑی تعداد رہائش پزیر ہے لہذا عیدین کے مواقع پر اپنے ہم وطنوں سے میل ملاقات ، کھانے اور اجتماعی سرگرمیاں ایک معمول ہے۔ رواں برس عید الاضحیٰ کے موقع پر بھی وہی روایتی جوش و خروش دیکھنے میں آیا جو یہاں رہنے والے پاکستانیوں کا خاصہ ہے۔عام طور پر یہ کوشش ہوتی ہے کہ نماز عید  بیجنگ کی سب سے بڑی اور قدیم تاریخی نیو جے مسجد میں ادا کی جائے کیونکہ وہاں بیجنگ اور اس سے ملحقہ علاقوں میں رہنے والےچینی مسلمان ہزاروں کی تعداد میں جمع ہوتے ہیں ،ساتھ ساتھ بیجنگ میں رہائش پزیر مختلف ممالک کے مسلمان بھی نماز عید کے لیے نیوجے کو ہی ترجیح دیتے ہیں۔اس مسجد کی حیثیت بالکل ویسے ہی ہے جیسے اسلام آباد میں فیصل مسجد اور لاہور میں بادشاہی مسجد کی۔نیوجے مسجد کے ساتھ ہی حلال کھانوں کی ایک انتہائی وسیع مارکیٹ موجود ہے جہاں سے مسلمان نماز عید کے بعد گوشت سمیت دیگر اشیائے ضروریہ بڑی مقدار میں خریدتے ہیں۔

نیوجے مسجد کے علاوہ بیجنگ کی ہائیدیان مسجد کا شمار بھی ایسی مساجد میں کیا جاتا ہے جہاں نماز عید کا بڑا اجتماع ہوتا ہے۔یہ مسجد بیجنگ کے ایسے مقام پر واقع ہے جس کے اطراف میں کئی جامعات موجود ہیں جہاں پاکستانی طلباء کی ایک کثیر تعداد زیر تعلیم ہے۔لہذا نماز عید کے بعد  ایک دوسرے کے گلے لگ کر "عید مبارک"کہنے کا رنگ یہاں سب سے منفرد اور خوبصورت ہے۔

ہائیدیان کے بعد اب رخ کرتے ہیں بیجنگ میں پاکستانی سفارتخانے کی مسجد کا ،یہاں چونکہ چین میں تعینات پاکستانی سفیر سمیت سفارتخانہ کا عملہ عید کی نماز ادا کرتا ہے لہذا آپ کو کسی قسم کی اجنبیت محسوس نہیں ہوتی ہے۔ عید الاضحیٰ کے موقع پر پاکستانی سفارتخانے کے افراد ایک ساتھ مل کر قربانی کا انتظام کرتے ہیں۔ بیجنگ شہر  میں کسی مناسب جگہ پر قربانی کا انتظام کیا جاتا ہے جہاں پاکستانیوں کی ایک بڑی تعداد موجود ہوتی ہے۔پاکستان اور دیگر اسلامی ممالک کے برعکس یہاں قربانی کے لیے چھوٹے جانور مثلاً دنبہ ،بکرے موزوں شمار کیے جاتے ہیں۔جانور زبح کرنے کے بعد گوشت کو چھوٹے حصوں میں تقسیم کروانے کے لیے حلال فوڈ مارکیٹ میں مسلمان قصائیوں کی مدد لی جاتی ہے جہاں وہ مشینوں کی مدد سے صرف پانچ سے دس منٹ میں گوشت کے حصے کر دیتے ہیں۔جانور زبح کرنے کے مقام پر صفائی کا خاص خیال رکھا جاتا ہے اور اس بات کو یقینی بنایا جاتا ہے کہ دیگر چینی شہریوں کو کسی قسم کے مسائل کا سامنا نہ کرنا پڑا۔اس وقت چونکہ دنیا بھر میں وبائی صورتحال کا سامنا بھی ہے لہذا اس بات کو مدںظر رکھتے ہوئے بیجنگ سمیت چین بھر میں احتیاطی تدابیر اپنائی گئی ہیں۔گوکہ چین میں انسداد وبا کی بہتر صورتحال کے باعث معمولات زندگی رواں دواں ہیں ،اقتصادی سماجی سرگرمیاں تیز رفتاری سے جاری ہیں لیکن اس کے باوجود احتیاط کا دامن نہیں چھوڑا جا رہا ہے۔ 

گوشت تو بن گیا اب اگلا مرحلہ تقسیم کا بھی ہے ، اس ضمن میں قربانی کرنے والے مسلمانوں کی کوشش ہوتی ہے کہ اپنے آس پاس ایسے مسلمانوں میں ضرور گوشت تقسیم کیا جائے جو چین میں یہ فریضہ ادا نہیں کر سکے ہیں۔ہمارےپیارے دوست اور بڑے بھائی زبیر بشیر شام میں ہمیشہ اجتماعی دعوت کا اہتمام کرتے ہیں جس میں نہ صرف پاکستانی افراد بلکہ چند عرب اور افریقی ممالک سے بھی مسلمان بھائیوں کو مدعو کیا جاتا ہے۔ یوں اجتماعی طور پر عید کی خوشیوں کو مل کر دوبالا کیا جاتا ہے اور پردیس میں اپنے وطن کی یادوں کو تازہ کیا جاتا ہے۔  

۔

 نوٹ:یہ بلاگر کا ذاتی نقطہ نظر ہے جس سے ادارے کا متفق ہونا ضروری نہیں۔

۔

 اگرآپ بھی ڈیلی پاکستان کیساتھ بلاگ لکھنا چاہتے ہیں تو اپنی تحاریر ای میل ایڈریس ’zubair@dailypakistan.com.pk‘ یا واٹس ایپ "03009194327" پر بھیج دیں.   ‎

مزید :

بلاگ -