میڈیا کا کردار

میڈیا کا کردار
میڈیا کا کردار

  

زندگی اور آج کی دنیا میں میڈیا کا کردار بہت اہم ہے۔ میں نے اپنے بچپن سے ہی دیکھا ہے کہ جنرل ضیاء الحق کے مارشل لاء کے زمانے میں سیاسی سرگرمیوں کی خبر شائع کرنے کا واحد ذریعہ اخبار تھا۔ اس وقت ہرایک رپورٹرز، نیوز رپورٹرز، ڈیسک انچارج، ایڈیٹرز اور بہت سارے لوگ کام کر رہے تھے، وہ اب بھی اہم ہیں لیکن وقت بدل گیا ہے کیوں کہ ٹی وی چینلز آج کی زندگی میں زیادہ اہمیت لے چکے ہیں بریکنگ نیوز، اور واقعات کی براہ راست ٹیلی کاسٹنگ، معلومات کا تبادلہ اور پریس کانفرنسیں۔ اخبار ٹی وی چینلز سے کم اہم ہوگیا ہے۔ مارشل لاء کے دوران جمہوریت کی بحالی کی جدوجہد بہت مشکل تھی اور لوگوں کو اکٹھا کرنا اور سیاسی جماعت کا چلانا ایک مشکل کام تھا۔ اس دوران نہ تو کوئی موبائل فون تھا، نہ فیکس اور نہ ہی انٹرنیٹ کی سہولت موجود تھی۔ مختلف دیہاتوں، شہروں یا ملک کے دیگر حصوں میں رہنے والے لوگوں کو پیغام پر فوری طور پر پہنچانا ناممکن تھا۔پیغام جس طرح بھیجا جاتا وہ یہ تھا کہ خط پوسٹ کریں، لینڈ لائن نمبر پر کال بْک کریں اور رابطہ قائم کرنے کے لئے کال کا انتظار کریں جس کی کوئی حد مقرر نہیں تھی، یا ٹیلیگرام بھیجنا ہی معلومات یا پیغام کو منتقل کرنے کا واحد طریقہ تھا۔

لہذا جمہوریت کے لئے جدوجہد کرنے والے لوگوں کے لئے اخبار ایک بہت اہم ذریعہ تھا۔ اس وقت پاکستان پیپلز پارٹی مرکزی پارٹی تھی جس کے کارکنان کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا تھا وہ عظیم مقصد کے لئے قربانیاں دے رہے تھے۔ مجھے یاد ہے کہ اخبارات میں کام کرنے والے افراد، رپورٹرز یا فوٹو گرافروں کو میرے والد کی طرف سے زیادہ عزت دی جاتی تھی اور ان میں سے بیشتر، اس حقیقت کے باوجود کہ وہ بوڑھے ہو چکے ہیں، اب تک ایک کنبے کے ممبر کی طرح ہیں، وہ سچے صحافی تھے ان کو پیشے کا احترام تھا. وہ بغیر کسی لالچ کے اخبار میں کام کرتے تھے اپنی عزت و وقار کے لئے۔ ضیاء کے ہوائی جہاز والے حادثے کے بعد اخبار تمام سیاسی، جمہوری اور غیر جمہوری قوتوں کے لئے اہم بن گیا۔ نئے چینلز کے لائسنس اخباری مالکان اور دیگر افراد کو دینے کے بعد بھی یہ میڈیم بہت طویل عرصے تک اہم تھا۔ بہت سارے لوگ خاص طور پر عمائدین ریڈیو کو بہت پسند کرتے تھے جو بی بی سی اور وائس آف امریکہ کی اردو سروس بھی اہم خبروں کے لئے بھی ایک انتہائی اہم وسیلہ تھا۔

مجھے یاد ہے انتخابات سے قبل یہ 2002 کا سال تھا، جب میرے والد ڈاکٹر جہانگیر بدر جنرل پرویز مشرف کے دور میں جیل میں تھے اور وہ اندرون شہر لاہور سے پیپلز پارٹی کے امیدوار کی حیثیت سے الیکشن لڑ رہے تھے، میں اپنے والد کی مہم چلا رہا تھا اور ایک نجی چینل سے پہلی گفتگو کی جس نے انتخابات اور موجودہ امور سے متعلق میرا انٹرویو لیا تھا۔ مجھے اندازہ نہیں تھا کہ آنے والے وقت میں یہ ٹی وی چینلز کتنے اہم ثابت ہوں گے اور وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ ایسے بہت سے ٹی وی چینلز آئے جنھیں صحافت کی آزادی دی گئی تھی اور وہ کر رہے تھے جو انہیں کرنا تھا۔ یہ ٹی وی چینلز بزنس بن گئے اور دوسرے کاروبار کی طرح ان کا اپنا ایجنڈا تھا کہ زیادہ سے زیادہ رقم کمائیں۔ پرنٹ میڈیا کے بہت سارے لوگوں کو الیکٹرانک میڈیا کا حصہ بننے کا موقع ملا جس نے ان کے پورٹ فولیو کو اہمیت دی اور بہت سے نئے افراد جو ٹی وی کے لئے متحرک تھے انہیں آن لائن لایا گیا اور اپنا کردار ادا کرنے کا موقع دیا گیا۔

اس الیکٹرانک میڈیا نے بہت سارے لوگوں کو جنم دیا جن میں سے بہت سے اب بھی کام کر رہے ہیں اور ان میں سے کچھ باقی ہیں۔ موجودہ معاملات پر براہ راست ٹی وی شو کی میزبانی میں نے چند سالوں تک کچھ ٹی وی چینلز کے ساتھ کام کرنے کا بھی تجربہ کیا تھا۔ میں نے ٹی وی کی میزبانی چھوڑ دی کیونکہ مجھے لگا کہ اس وقت میرے لئے ٹی وی شو پر اعتدال کا سیاسی ماحول موزوں نہیں تھا۔ میں نے بہت سے باصلاحیت اور سیکھے ہوئے لوگوں کے ساتھ بات چیت کی اور کام کیا۔ میں نے اس وقت محسوس کیا کہ ہر شخص ایسا صحافی نہیں ہوتا جو الیکٹرانک میڈیا کے میدان میں کام کر رہا ہو جو اسے حقیقی صحافی نہیں بناتا۔ حقیقی صحافی وہ لوگ ہیں جنہوں نے پرنٹ میڈیا میں کام کیا اور اب بھی پرنٹ کے لئے کام کر رہے ہیں، لیکن ان کے پورٹ فولیو اہمیت کے حامل ہیں اور اب یہ الیکٹرانک میڈیا کا حصہ ہیں۔ بہت سے صحافی ہیں جو ان لوگوں کو حقیقی صحافی کہنا پسند نہیں کرتے جنھوں نے پرنٹ میڈیا کے لئے کام نہیں کیا۔ یہ ایک قابل بحث سوال ہے جس پر کسی اور وقت تبادلہ خیال کیا جاسکتا ہے۔

اب پچھلے کچھ سالوں سے سوشل میڈیا نے خبروں اور معلومات کو شیئر کرنے کے لئے ایک بہت ہی اہم مقام حاصل کیا ہے جو ان تمام لوگوں کے لئے ایک نیا ذریعہ ہے جن کی پرنٹ میڈیا یا الیکٹرانک میڈیا تک رسائی نہیں ہے۔ اس میڈیم کا اپنا ہدف اور مارکیٹ ہے کہ اس دنیا کا ہر فرد اس تک رسائی حاصل کرسکتا ہے یا مواد لکھ سکتا ہے یا معلومات کو تحریری شکل میں بانٹ سکتا ہے یا اسے ذاتی طور پر شیئر کرسکتا ہے۔ اس پلیٹ فارم پر بہت مستند معلومات ہیں اور یہاں بہت ساری جعلی خبریں بھی چل رہی ہیں۔ ہمیں یہ فیصلہ کرنا ہے کہ ہم کس چیز کو صحیح محسوس کریں گے اور اس پر یقین کریں گے۔

موجودہ حکومت کے موجودہ حالات میں اب پاکستانی میڈیا کا کردار بہت اہم ہوگیا ہے۔ اقتدار میں آنے سے پہلے پچھلے کئی سالوں سے موجودہ حکومت کے بہت سے حامی اور حکمران جماعت کے رہنما کی حمایت کر رہے ہیں لیکن اب پچھلے کچھ مہینوں سے میڈیا والوں کا کردار موجودہ حکومت اور ان کی قیادت کے بارے میں اپنا موقف تبدیل کر رہا ہے۔ لوگ الیکٹرانک میڈیا پر جعلی خبروں اور زرد صحافت کے عروج کی تعریف نہیں کررہے ہیں، اس بات کو سوشل میڈیا پر اجاگر کیا جارہا ہے جس سے ملک میں عام آدمی کو صحیح اور غلط یا اچھے اور برے کے درمیان فیصلہ کرنے کی آگاہی دی جارہی ہے۔

مزید :

رائے -کالم -