سینیٹ الیکشن ویڈ یو سکینڈل، الیکشن کمیشن نے مسلم لیگ (ن) سے ثبو ت اور شواہد مانگ لئے 

  سینیٹ الیکشن ویڈ یو سکینڈل، الیکشن کمیشن نے مسلم لیگ (ن) سے ثبو ت اور شواہد ...

  

  اسلام آباد (سٹاف رپورٹر)سینیٹ انتخابات 2018 ء کے حوالے سے ویڈیو اسکینڈل پر الیکشن کمیشن نے مسلم لیگ (ن)سے ثبوت اور شواہد مانگ لئے جبکہ چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان راجہ نے کہا ہے کہ اگر آپ کوئی اضافی شواہد دینا چاہئیں تو فراہم کردیں،ہم جلد فیصلہ کریں گے کہ ہم نے آپ کی درخواست پر نوٹس جاری کرنا ہے یا نہیں؟ ویڈیو اسکینڈل کیس میں الیکشن کمیشن نے از خود نوٹس نہیں لیا بلکہ آپ نے درخواست دائر کی ہے، شواہد درخواست کے ساتھ نہیں لگائے، آپ اپنی کوششوں کے حوالے سے کمیشن کو بتائیں کہ آپ نے کیا ویڈیو اسکینڈل میں ملوث کسی شخص سے رابطہ کرکے اسے بطور شواہد لائے ہیں؟۔پیر کو سال 2018 ء سینیٹ انتخابات کے حوالے سے ویڈیو سکینڈل پر مسلم لیگ نون کے مرتضی جاوید عباسی کی درخواست پر الیکشن کمیشن میں چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان کی سربراہی میں پانچ رکنی کمیشن نے سماعت کی۔مسلم لیگ (ن)کے وکیل جہانگیر جدون نے کہا کہ 2018 ء کے سینیٹ الیکشن کے حوالے سے ویڈیو وائرل ہوئی ہے، الیکشن کمیشن کو سینیٹ الیکشن شفاف کرانے کیلئے وسیع اختیارات دیے گئے ہیں، شفاف انتخابات کرانا الیکشن کمیشن کی ذمہ داری ہے۔چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان راجہ نے کہا کہ کیا یہ ویڈیو آپ کے علم میں بھی ابھی آئی؟ اس سے قبل آپ کی جماعت کو اس ویڈیو کے حوالے سے کوئی علم نہیں تھا؟ الیکشن کمیشن بلا تفریق جائیگا۔انہوں نے کہا کہ الیکشن لیکشن کی بے شک ڈیوٹی ہے کہ وہ معاملے کی تحقیقات کرے، اس وقت ویڈیو اسکینڈل کیس میں الیکشن کمیشن نے از خود نوٹس نہیں لیا، بلکہ آپ نے درخواست دائر کی ہے لیکن شواہد درخواست کے ساتھ نہیں لگائے،آپ اپنی کوششوں کے حوالے سے کمیشن کو بتائیں کہ آپ نے کیا ویڈیو اسکینڈل میں ملوث کسی شخص کو بطور شواہد لایا ہے؟ جو لوگ ویڈیو میں آ رہے ہیں انہوں نے میڈیا میں بیان دئیے ہیں۔چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ جن لوگوں نے اس کیس کے حوالے سے بات کی ہے آپ انہیں تو بطور شواہد لگا سکتے ہیں؟ کمیشن اپنا کام کرے گا، الیکشن کمیشن انتخابات میں شفافیت پر غیر جانبدارانہ اقدامات اٹھاتا ہے، ویڈیو سیکنڈل کی تحقیقات کے حوالے سے شواہد دیں تاکہ الیکشن کمیشن کارروائی کرے، الیکشن کمیشن تحقیقاتی اداروں کو بلاکر ویڈیو کی تحقیقات کراسکتا ہے۔ممبر الطاف ابراہیم قریشی نے کہا کہ سینیٹ الیکشن کے حوالے سے چیف الیکشن کمشنر نے سپریم کورٹ نے واضح بیان دیا کہ کیا ہر سیاسی جماعت کے ارکان اسمبلی بکاؤ مال ہیں؟ آپ نام بتائیں کہ کون لوگ اس ویڈیو میں ملوث ہیں؟ کیا ویڈیو میں کوئی گفتگو سنائی دے رہی ہے کہ کس معاملے کے پیسے کی transaction ہو رہی ہے؟ آپ شواہد فراہم کریں،کیا سارے ایم پی ایز ایسے ہیں، کسی میں جرات نہیں کہ آکر کہیں کہ ہم ایسے نہیں ہیں؟ اگر کمیشن ایسے ہر ممبر کے خلاف کاروائی کرے گا تو اسمبلی کا تو کورم ہی پورا نہ ہوگا، ہم تو جرات کرتے ہیں لیکن آپ تو خود مصلحتوں کا شکار ہو جاتے ہیں، گزشتہ سینیٹ انتخابات میں دھاندلی کے حوالے سے مسلم لیگ نون کی عظمی بخاری، امیر مقام کو نوٹس بھی بھیجا لیکن انہوں نے الیکشن کمیشن میں آنا تک مناسب نہ سمجھا۔جہانگیر جدون نے کہا کہ الیکشن کمیشن ڈی جی ایف آئی کو کہیں کہ وہ اس معاملے کی تحقیقات کرائیں، ویڈیو خود ایک ثبوت ہے، پرویز خٹک نے خود کہا کہ مجھے معلوم ہے کہ کس گھر میں پیسے دیے گئے، پی ٹی آئی کے چیئرمین نے خود کہا کہ ہم نے لوگوں کو نکالا ہے۔مرتضیٰ جاوید عباسی نے کہا کہ میں نے ہارس ٹریڈنگ معاملے میں ملوث دو ایم پی ایز سے بات کی، تاہم وہ آنے کو تیار نہیں ہیں، پیسوں کے لین دین میں ملوث ارکان کی اسمبلیوں کی رکنیت معطل کرے۔ممبر ارشاد قیصر نے کہا کہ چیئرمین سینیٹ کے خلاف عدم اعتماد تحریک میں جو کچھ ہوا اس کے خلاف کیا کارروائی ہوئی؟ سکندر سلطان راجہ نے کہا کہ ہم نے آپ کی درخواست کی فائل پڑھ رکھی ہے اگر آپ کوئی اضافی شواہد دینا چاہئیں تو فراہم کردیں ہم جلد فیصلہ کریں گے کہ ہم نے آپ کی درخواست پر نوٹس جاری کرنا ہے یا نہیں؟

الیکشن کمیشن

 اسلام آباد (سٹاف رپورٹر)مسلم لیگ (ن)نے این اے 75 ڈسکہ میں 20 پولنگ اسٹیشنز کے معاملے پر الیکشن کمیشن سے کھلی سماعت کا مطالبہ کرتے ہوئے دعویٰ کیا ہے کہ بیس گم ہونے والے پریزائیڈنگ افسران کے نتائج پر دستخط شدہ فارم 45 موجود ہیں۔ پیر کو الیکشن کمیشن کے باہر ن لیگ کے رہنما شاہد خاقان عباسی نے مریم اورنگزیب، عطا تارڑ اور ڈسکہ سے کامیابی کی دعویدار امیدوار نوشین افتخار کے ہمراہ الیکشن کمیشن کے باہر پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پریزائیڈنگ افسران تو مل گئے ہیں لیکن چیف سیکرٹری پنجاب ابھی تک گم ہیں۔ڈسکہ سے ن لیگ کی کامیابی کی دعویدار امیدوار نوشین افتخار نے کہا کہ الیکشن کمیشن ہمیں انصاف دے۔ضمنی انتخابات میں حکومتی انتقامی سازشوں میں پولیس ملوث رہی ہے۔ شاہد خاقان عباسی نے کہاکہ شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ وفاقی اور صوبائی حکومت کے زور کے باوجود ن لیگ کامیاب رہی۔

مسلم لیگ (ن)

مزید :

صفحہ اول -