صوابی، ٹوبیکو کمپنیوں کاتمباکو نہ خریدنے کیخلاف احتجاجی مظاہرہ

      صوابی، ٹوبیکو کمپنیوں کاتمباکو نہ خریدنے کیخلاف احتجاجی مظاہرہ

  

 صوابی(بیورورپورٹ) ضلع صوابی کے کاشتکاران تمباکو نے ٹوبیکو کمپنیوں کی جانب سے تمباکو نہ خریدنے کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کر کے صوابی انٹر چینج کے مقام پر پشاور اسلام آباد موٹر وے کو بطور بند کر دیا۔ بعد ازاں اسلام آباد پشاور موٹروے کو احتجاجی کسانوں کی تین گھنٹے کی بندش کے بعد کھول دیا گیا اور کاشتکار رہنماؤں اور ضلعی انتظامیہ کے درمیان مذاکرات کامیاب ہوئے۔کاشتکاروں نے ایک ہفتہ قبل اپنا احتجاج شروع کیا اور جگنات میں ایک ملٹی نیشنل کمپنی کے سامنے دھرنا جاری رکھا۔ تمباکو فروش ایسوسی ایشن پاکستان کے مرکزی چیئرمین لیاقت یوسف زئی نے ناکہ بندی ختم کرنے کا اعلان کیا ہے اور بامعنی مذاکرات کے بعد وہ میڈیا والوں کو بریفنگ دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کمپنیوں نے اس بات پر اتفاق کیا ہے کہ وہ تمباکو کی تمام مصنوعات کاشتکاروں سے خریدیں گی اور خریداری بغیر کسی امتیاز کے ہوگی، منگل (آج) سے شروع کرنے کا منصوبہ ہے۔انہوں نے کہا کہ فصل کی خریداری ہماری بنیادی مانگ تھی اور ملٹی نیشنل کمپنیاں تمام کاشتکاروں سے فصل لینے پر راضی ہو گئی ہیں۔اتحاد کاشتکارن کے صدر عارف خان نے کہا کہ ان کی جدوجہد کسانوں کے لیے تھی اور یہ بڑی کامیابی تھی کہ کمپنیوں نے غریب کسانوں کی مانگ کو پورا کرنے پر اتفاق کیا۔اس سے قبل تمباکو کے کاشتکاروں نے کمپنیوں کے خلاف ضلع بھر میں پرامن احتجاجی مظاہرہ کیا ہے۔کاشتکاروں کا مارچ جگنات، تحصیل رضا سے شروع ہوا اور تمباکو بڑھانے والے تمام علاقوں اور ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹرز کے بازاروں سے گزرا جب کسان کاروں، فلائنگ کوچ، ٹریکٹر ٹرالیوں اور موٹر سائیکلوں پر سوار تھے۔وہ کمپنیوں، خیبر پختونخوا حکومت کی مکمل ناکامی اور وفاقی وزارت تجارت کے خلاف نعرے لگا رہے تھے جو کسانوں کی قیمت پر فصل کی تمام ضروریات کو کھا جاتی ہے۔وہ صوابی انٹر چینج پر جمع ہوئے اور وہاں سے اسلام آباد پشاور موٹروے تک مارچ کیا اور اسے ٹریفک کے لیے بلاک کردیا۔معلوم ہوا ہے کہ موٹر وے کھولنے کے لیے ضلعی پولیس اور ضلعی انتظامیہ پر زبردست دباؤ تھا لیکن پولیس نے لاٹھی چارج اور مذاکرات کو ترجیح دینے سے گریز کیا۔دریں اثناء جماعت اسلامی نے بھی مہنگائی کے خلاف اور تمباکو کے کاشتکاروں کی حمایت میں احتجاج کیا اور سوال کیا کہ حکومت کی ''بے حسی'' کیا ہے؟جماعت اسلامی کے رہنماؤں اور کارکنوں نے ضلعی ہیڈ کوارٹرز میں سڑکوں سے مارچ کیا اور کرنال شیر خان چوک پر جمع ہوئے جہاں کارکنوں کو ان کے رہنماؤں نے خطاب کیا۔جماعت اسلامی کے رہنماؤں نے کہا کہ پی ٹی آئی حکومت صرف ٹیکس لگانا جانتی ہے، قیمتوں میں اضافہ کرتی ہے اور عوام کی فلاح و بہبود کے لیے کچھ کرنے میں مکمل طور پر ناکام ہوچکی ہے، یہ مطالبہ کرتی ہے کہ تمام تمباکو کی مصنوعات کمپنیوں سے خریدی جائیں۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -