حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ کی رہبری

حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ کی رہبری
حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ کی رہبری

  

لیڈرشپ ایک غیر معمولی، ایک ایسا معیار ہے جو ہر ایک کے پاس نہیں ہوتا۔ قیادت میں مختلف خصوصیات پائی جاتی ہیں جو محدود نہیں ہیں لیکن اصول، کردار، صداقت، دیانت، وفاداری، احترام، فراخدلی، رواداری، صبر، قربانی اور بصیرت کا ہونا قائد کی خصوصیات میں سے کچھ  ہیں۔ لیڈرشپ آگے بڑھنے، پہل کرنے، آگے آنے، کنارے کی طرف جانے والی، اپنی ٹیم / پیروکاروں کو اعتماد دلانے، اپنی ٹیم کی رہنمائی کرنے، ان کی نشوونما کرنے، انہیں کنٹرول اور کمانڈ سے سنبھالنے اور اپنے راستے کی سمت آپ کی اہلیت رکھتی ہے۔ اولین مقصد. قیادت دوسرے قائدین بنانے اور ایک ایسی مثال قائم کرنے کے بارے میں ہے جس کی پیروی آپ کی قیادت کے ذریعے لوگ کر سکتے ہیں اور سیکھ سکتے ہیں۔

ہمیشہ کی طرح اس دسویں محرم کو بھی  ویسے ہی جانا جیسے میں اپنے بچپن سے ہی اس دن کو(عاشورہ) اپنے گھر میں اہم دن کے طور پر دیکھتا رہا ہوں اور دیکھ رہا ہوں۔ میری مرحومہ دادی  اس دن کو مذہب اسلام کے نجات دہندہ کی حیثیت سے حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ کی عظیم قربانی کے طور پر احترام کرتی تھیں اور آج تک میری والدہ میرے ساتھ، میرے بہن بھائی اور بچے اس روایت کی پیروی کرتے ہیں اس دن عاشورہ کے دن دودھ کی سبیل لگا کر اور لوگوں کو کھانا کھلاتے ہوئے،میں نے حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ کی عظیم قربانی کے بارے میں سیکھا ہے۔ ایسی حیثیت جو ایک امام کی  ہے، جو انہیں امت کا قائد بناتی ہے، ان کی قائدانہ خوبی تھی کہ جو ان کی طرف سے اصولوں پر سمجھوتہ نہ کرنے اور یزید کی  بیعت نہ کرنے پر ان کے سخت مؤقف کی وجہ سے جانی گئی تھی۔ انہوں نے اپنے عمل سے دین اسلام کو بچانے کے لئے تاریخی مؤقف اپنایا اور مخالفین کی غلط تعلیم اور گمراہی  کی نفی کی ہے جو حقیقت میں اسلام کے مخالفین  تھے، ان کی قیادت کے حوالے سے مختلف فورمز پر اب بھی بہت سارے عالمی رہنما تبادلہ خیال اور اظہار کرتے ہیں۔ حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ کی تعلیم و رہنمائی کی پیروی کرتے ہیں۔ میں یہ بتانا چاہتا ہوں کہ عالمی امور کے چند اہم قائدین جنہوں نے حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ کی شہادت کے بارے میں کہا۔

مہاتما گاندھی نے کہا کہ "میرا عقیدہ یہ ہے کہ اسلام کی ترقی کا انحصار اپنے مومنین کے ذریعہ تلوار کے استعمال پر نہیں، بلکہ عظیم سنت، حسینؓ کی اعلی قربانی کا نتیجہ ہے۔" انہوں نے مزید کہا کہ "میں نے مظلوم ہونے کے دوران فتح حاصل کرنے کا طریقہ حسین سے سیکھا،"

چارلس ڈکنز نے کہا: "اگر حسینؓ اپنی دنیاوی خواہشات کے لئے جدوجہد کرتے تو مجھے سمجھ نہیں آتی کہ ان کی بہنیں، بیویاں اور بچے ان  کے ساتھ کیوں تھے؟۔ اس لئے اور اس وجہ سے کہ انہوں نے اسلام کے لئے خالصتا. قربانی دی۔

رابندر ناتھ ٹیگور نے کہا: "انصاف اور سچائی کو زندہ رکھنے کے لئے، فوج یا ہتھیاروں کی بجائے، جانیں قربان کرکے ہی کامیابی حاصل کی جاسکتی ہے، بالکل اسی طرح جیسے  امام حسینؓ نے کیا تھا۔"

پنڈت جواہر لال نہرو نے کہا: "امام حسینؓ کی قربانی تمام گروہوں اور برادریوں کے لئے ہے، جو راستبازی کی راہ کی ایک مثال ہے۔"

رابرٹ ڈوری اوسورن نے کہا: "حسینؓ کا ایک بچہ جس کی عمر صرف ایک سال تھی۔ وہ اپنے والد کے ساتھ گیا تھا۔ اس کے رونے کی وجہ سے  انہوں نے نوزائیدہ بچے کو اپنی بانہوں میں لے لیا۔ اسی وقت، دشمنوں کی صفوں میں سے ایک  تیر نے بچے کے کانوں کو چھید لیا، اور یہ اس کے والد کے بازوؤں میں ختم ہو گیا۔ حسینؓ نے چھوٹی سی لاش زمین پر رکھی۔‘ہم خدا کی طرف سے آتے ہیں، اور ہم اسی کی طرف لوٹ جاتے ہیں!‘ وہ پکارے۔ "اے رب، مجھے ان بدبختیوں کو برداشت کرنے کی توفیق عطا کرو!"

تھامس کارلائل نے کہا: ”سانحہ کربلا سے ہمیں سب سے بہتر سبق ملتا ہے کہ حسینؓ اور اس کے ساتھی اللہ کے  لئے آئے تھے۔ انہوں نے واضح کیا کہ جب حق اور باطل کی بات ہو تو عددی برتری  کسی شمار میں نہیں ہوتی۔ ان کی اقلیت کے باوجود حسینؓ کی فتح نے مجھے حیرت میں ڈال دیا!

نیلسن منڈیلا نے کہا کہ "میں نے 20 سال سے زیادہ جیل میں گزارے ہیں، پھر ایک رات میں نے حکومت کی تمام شرائط و ضوابط پر دستخط کرکے ہتھیار ڈالنے کا فیصلہ کیا۔ لیکن اچانک میں نے امام حسینؓ اور کربلا کی تحریک کے بارے میں سوچا اور امام حسینؓ نے مجھے آزادی اور آزادی کے حق میں کھڑے ہونے کی طاقت عطا کی اور میں نے اس کی تکمیل کی۔

ہم سب کو یہ بات بخوبی سمجھ میں آتی ہے کہ پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے نواسے  اور  حغرت علیؓ  کے پیارے بیٹے اور حضرت بی بی فاطمہ رضی اللہ عنہ اور حضرت امام حسنؓ  کے چھوٹے بھائی ہونے کے ناتے وہ ان سب کے وارث اور جانشین تھے۔ اسلام وہ  دین ہے  جسے ان کے پیارے  نانا لائے تھے اور قائم کیا تھا۔ ابتداء سے ہی یہ خاندان اسلام کا ایک مضبوط محافظ تھا۔ اس خاندان کے ممبران اسلام کے لئے کسی بھی طرح کی قربانی پیش کرسکتے تھے اور کئی بار انہوں نے اپنی تمام تر  آسائشوں کو اسلام کے لئے قربان کردیا اور یہاں تک کہ انھوں نے اپنی جان اور اپنے پیاروں کی زندگی بھی  پیش کردی۔ حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ اسلام کی خاطر سب کچھ قربان کرنے کے عادی تھے۔ ان کو اسلام خطرے میں ملا اور وہ اس کے دفاع کے لئے اٹھ کھڑے ہوئے۔ انہوں نے یہ بھی  سوچا کہ اسلام کے لئے موثر اور آخری قربانی پیش کرنے کا بہترین موقع ہے کہ یہ ہمیشہ کے لئے خطرہ سے محفوظ رہے۔ لہذا، وہ اپنے کچھ منتخب رشتہ داروں اور ساتھیوں کے ساتھ ’کربلا‘ آئے ان کا قافلہ خواتین اور بچوں سمیت بہتر افراد سے زیادہ نہیں تھا۔

دین اسلام کو بچانے کے لئے حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ کا وژن آنے والے وقت میں باقی دنیا کے لئے ہمیشہ یاد رکھا جائے گا۔

یزید نے اپنے اموی رشتہ دار مروان کو ایک خط بھیجا جس میں کہا گیا تھا کہ“حسینؓ اور ان کے ساتھیوں کو پکڑو تاکہ وہ بیعت کریں۔ اتنی سختی سے کام لیں کہ انھیں بیعت کرنے سے پہلے کچھ کرنے کا موقع ہی نہ ملے۔

حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ نے انکار کیا اور کہا: "میں کبھی بھی یزید کے ہاتھ میں ہاتھ نہیں دوں گا، اور نہ ہی میں کسی غلام کی طرح بھاگوں گا… میں برائی پھیلانے یا دکھاوے کے لئے نہیں آیا تھا… میں صرف  یہ کہنے کی خواہش کرتا ہوں اچھی اقدار اپناؤ اور برائی سے بچاؤ۔ " اور یہ کہ "مجھ جیسا کوئی، اپنے جیسے کسی سے بیعت نہیں کرتا ہے"۔ حسینؓ کا آخری فیصلہ تھا: "عزت کے ساتھ موت ذلت کی زندگی سے کہیں بہتر ہے"۔

وہ بنی نوع انسان کا پہلا اور سب سے بڑا شہید ہے۔ بہادر، انتہائی مہربان، فیاض، مخلص آدمی جس نے کبھی زمین کو سیراب کیا۔ اپنے نرم دل اور خوبصورت فطرت کے ساتھ، ان کو  لاتعداد لوگوں کے ساتھ غم سے نبرد آزما ہونے اور مصائب کا سامنا کرنا پڑا۔ انہوں نے ہمیں سکھایا کہ جب تم ٹھیک ہو تو تمہیں جان بھی دینا پڑے تو غم نہ کرو۔ آپ انسان کا سر لے سکتے ہیں آپ اس کی روح نہیں لے سکتے۔ حضرت حسین رضی اللہ عنہ حضرت علی رضی اللہ عنہ دلوں کے حکمران ہیں اور وہ ہمیشہ زندہ رہیں گے، حغرت امام حسینؓ کا راستہ نجات کا راستہ ہے، اس پر چل کر ہی دنیا اور عاقبت کو سنوارا جا سکتا ہے اور قیادت کے لئے یہی خوبیاں درکار ہیں 

مزید :

رائے -کالم -