معروف شاعرہ ادا جعفری کا یومِ وفات(3نومبر)

معروف شاعرہ ادا جعفری کا یومِ وفات(3نومبر)
معروف شاعرہ ادا جعفری کا یومِ وفات(3نومبر)

  

ادا جعفری اردو زبان کی معروف شاعرہ ہیں۔ آپ کی پیدائش 22 اگست 1924ء کو بدایوں میں پیدا ہوئیں۔ آپ کا خاندانی نام عزیز جہاں ہے۔ آپ تین سال کی تھیں کہ والد مولی بدرالحسن کا انتقال ہو گیا۔ جس کے بعد پرورش ننھیال میں ہوئی۔ ادا جعفری نے تیرہ برس کی عمر میں ہی شاعری شروع کر دی تھی۔ وہ ادا بدایونی کے نام سے شعر کہتی تھیں۔ اس وقت ادبی رسالوں میں ان کا کلام شائع ہونا شروع ہو گیا تھا۔ آپ کی شادی 1947ء میں نور الحسن جعفری سے انجام پائی شادی کے بعد ادا جعفری کے نام سے لکھنے لگیں۔ ادا جعفری عموماً اختر شیرانی اور اثر لکھنوی سے اصلاح لیتی رہی۔ ان کے شعری مجموعہ شہر درد کو 1968ء میں آدم جی ادبی انعام ملا۔ شاعری کے بہت سے مجموعہ ہائے کلام کے علاوہ'' جو رہی سو بے خبری رہی ''کے نام سے اپنی خود نوشت سوانح عمری بھی 1995ء میں لکھی۔ 1991ء میں حکومت پاکستان نے ادبی خدمات کے اعتراف میں تا امتیاز سے نوازا۔ وہ کراچی میں رہائش تھیں ۔ (ادا جعفری کی خؤدنوشت جو رہی سو بے خبری رہی کا سرورق اس لنک پر دیکھا جاسکتا ہے۔3دسمبر2015کو کراچی میں انتقال کر گئیں۔

نمونۂ کلام

کوئی خبر بھی نہ بھیجی بہار نے آتے 

کہ ہم بھی قسمتِ مژگاں سنوارنے آتے 

پھر آرزو سے تقاضائے رسم و رہ ہوتا 

نگہ پہ قرض تھے جتنے اُتارنے آتے 

یہ زندگی ہے ہر اک پیرہن میں سجتی ہے 

نہیں تھی جیت نصیبوں میں ہارنے آتے 

کوئی شرر کوئی خوشبو کہ دل نہ بجھ جائے 

کسی بھی نام سے خود کو پکارنے آتے 

ابھی یہاں تو نہیں ہو سکی حکایتِ جاں 

نئے ورق پہ نئے نقش اُبھارنے آتے 

کبھی غبار کبھی نقش پائے راہرواں 

وہ رہ گزر تھی کہ ہر رُوپ دھارنے آتے 

مرا سکوں بھی مرے آنسوؤں کے بس میں تھا 

یہ میہماں مری دنیا نکھارنے آتے 

جو ہم نہیں تو سرِ رہِ گزارِ درد   اداؔ 

وہ کون تھے جو دل و جاں کو وارنے آتے 

شاعرہ: ادا جعفری

Koi   Khabar   Bhi   Na   Bhaiji   Bahaar   Nay   Aatay

Keh   Ham   Bhi   Qismat-e-Mizzgaan   Sanwaarnay   Aatay

 Phir   Aarzu   Say   Taqaaza-e-Rasm-o-Rah   Hota

Nigah   Pe   Jitnay   Thay   Qarz   Utaarnay   Aatay

Yeh   Zindagi   Hay   Har   Ik   Pairhan   Men   Sajati   Hay

Nahen   Thi   Jeet   Naseebon   Men   Haarnay   Aatay

 Koi   Sharar   Koi   Khushbu   Keh   Dil   Na   Bujh   Jaaey

Kisi   Bhi   Naam   Say   Khud   Ko   Pukaarnay   Aatay

 Abhi   Yahaan   To   Nahen   Ho   Sakti   Hiqaayat -e-Jaan

Naey   Waraq   Pe   Naey   Naqsh   Ubhaarnay   Aatay

 Kabhi   Ghubaar    Kabhi   Naqsh   Paa-e-  Rahrawaan

Wo   Reh   Guzar   Thi   Keh   Har   Roop   Dhaarnay   Aatay

 Mira   Sakoon   Bhi   Mira   Aaansuon   K   Bass   Men   Tha

Yeh   Mehimaan   Miri   Dunya   Nikhaarnay   Aatay

 Jo   Ham   Nahen   To   Sar-e-Reh   Guzaar-e-Dard   ADA

Wo   Kon   Thay   Jo   Dil -o-Jaan   Ko   Waarnay   Aatay

 Poetess: Ada   Jafri

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -