دل تمنا سے ڈر گیا جانم

دل تمنا سے ڈر گیا جانم
دل تمنا سے ڈر گیا جانم

  

دل تمنا سے ڈر گیا جانم

سارا نشہ اُتر گیا جانم

اک پلک بیچ رشتۂ جاں سے

ہر زمانہ گزر گیا جانم

تھا غضب فیصلے کا اِک لمحہ

کون پھر اپنے گھر گیا جانم

جانے کیسی ہوا چلی اک بار

دل کا دفتر بِکھر گیا جانم

اپنی خواب و خیال دنیا کو

کون برباد کر گیا جانم

تھی ستم ہجر کی مسیحائی

آخرش زخم بھر گیا جانم

اب بَھلا کیا رہا ہے کہنے کو

یعنی میں بے اثر گیا جانم

نہ رہا دل نہ داستاں دل کی

اب تو سب کچھ بسر گیا جانم

زہر تھا اپنے طور سے جینا

کوئی اِک تھا جو مر گیا جانم

شاعر: جون ایلیا

Dil Tamanna Say Bhar Gia Jaanam

Saara Nassha Utar Gia Jaanam

Ik Palak Beech Rishta  e  Jaan  Say

Har Zamaana Guzar Gia Jaanam

Tha Ghazab Faislay Ka Ik Lamha

Kon Phir Apnay Ghar    Gia Jaanam

Jaanay Kaisi Hawaa Chali Ik Baar

Dil Ka Daftar Bikhar Gia Jaanam

Apni Khaab  o  Khayaal Dunya Ko

Kon Barbaad Kar Gia Jaanam

Thi Sitam Hijr Ki Maseehaai

Aakhrish Zakhm Bhar Gia Jaanam

Ab Bhala Kia Raha Hay Kehnay Ko

Yaani Main Be Asar Gia Jaanam

Na rah aDil ,Na Daastaan Dil Ki

Ab To Sab Kuch Basar Gia Jaanam

Zehr Tha Apnay Toar Say Jeena

Koi Ik Tha Jo Mar Gia Jaanam

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -