کبھی چراغ ، کبھی آئنہ بناتے ہوئے| غلام حسین ساجد |

کبھی چراغ ، کبھی آئنہ بناتے ہوئے| غلام حسین ساجد |
کبھی چراغ ، کبھی آئنہ بناتے ہوئے| غلام حسین ساجد |

  

کبھی چراغ ، کبھی آئنہ بناتے ہوئے

اُسے نگاہ میں رکھتا ہوں مسکراتے ہوئے

اُداس رہ نہیں سکتا کہ میری آنکھو ں میں

بہت سے پھول اُترتے ہیں کھلکھلاتے ہوئے

پلک جھپکنے میں کیا کچھ بدل گیا ہے یہاں

میں کھو نہ جاؤں اُسے راستا دِکھاتے ہوئے

پھر آج نیند میں چلتے ہوئے خیال آیا

ستارے سو بھی تو سکتے ہیں جھلملاتے ہوئے

ہر ایک پل میں بہت حادثے گزرے

زمین گھومتی رہتی ہے تھرتھراتے ہوئے

عجب نشہ ہے ساجد کلامِ موزوں میں

میں اُس کو بھول نہ جاؤں غزل سناتے ہوئے

شاعر: غلام حسین ساجد

(مجموعۂ کلام:ہست و بود؛سالِ اشاعت۔2018 )

Kabhi    Charaagh    Kabhi    Aaina    Banaatay    Huay

Usay    Nigaah    Men    Rakhta   Hun   Muskuraatay    Huay

Udaas    Reh    Nahen    Sakta    Keh    Meri    Aankhon   Men

Bahut   Say    Phool   Utartay   He n    Muskuraatay    Huay

Palak    Jhapaknay    Men    Kaya    Kuchh   Badal    Gaya   Hay   Yahan

Main    Kho    Na    Jaaun    Usay    Raasta    Dikhaatay    Huay

Phir    Aaj    Neend    Men    Chaltay    Huay    Khayaal   Aaya

Sitaaray    So    Bhi    To    Saktay    Hen   Jhilmilaatay    Huay

Har    Aik    Pall    Men   Bahut    Haadsay    Guzray

Zameen    Ghoomti    Rehti   Hay   Thartharaatay    Huay

Ajeeb    Nashha   Hay    SAJID   Kalaam-e-Maozoon   Nem

Main    Usay   Bhool    Na   Jaaun    Ghazal    Sunaatay   Huay

Poet: Ghulam    Husain   Sajid

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -