لکھیے اُسے خط میں کہ ستم اٹھ نہیں سکتا

لکھیے اُسے خط میں کہ ستم اٹھ نہیں سکتا
لکھیے اُسے خط میں کہ ستم اٹھ نہیں سکتا

  

لکھیے اُسے خط میں کہ ستم اٹھ نہیں سکتا

پر ضعف سے ہاتھوں میں قلم اٹھ نہیں سکتا

بیمار ترا صورتِ تصویرِ نہانی

کیا  اٹھے سرِ بسترِ غم اٹھ نہیں سکتا

آتی ہے صدا اے جرس، ناقۂ لیلیٰ

صد حیف کہ مجنوں کا قدم اٹھ نہیں سکتا

جون دانہ روئیدہ تہہِ سنگ ہمارا

سر زیرِ گراںبارِ الم اٹھ نہیں سکتا

ہر داغِ معاصٰ مرا اس دامنِ تر سے

ضوں حرف سیرِ کاغذِ نم اٹھ نہیں سکتا

اتنا ہوں تری تیغ کا شرمندہ ترا احساں

سر میر ا ترے سر کی قسم اٹھ نہیں سکتا

پردہ درِ کعبہ سے اٹھانا تو ہے آساں

پر پردۂ رخسارِ صنم اٹھ نہیں سکتا

کیوں اتنا گراں بار ہے جو رختِ سفر سے

اے راہِ رہِ ملکِ عدم اٹھ نہیں سکتا

دنیا کا زر و مال کیا جمع تو کیا ذوق 

کچھ فائدہ بے دستِ کرم اٹھ نہیں سکتا

شاعر:ابراہیم ذوق

(دیوانِ ذوق:مرتبہ انوارلحسن صدیقی؛سنِ اشاعت1957)

Likhiay Usay Khat Men Keh Sitam Uth Nahen Sakta

Par Zoaf  Say Haarhon Men Qaklam Uth Nahen Sakta

Beemaar Tira Surat e Tasveer e Nihaani

Kaya Uthay Sar e Bistar e Gham Uth Nahen Sakta

Aati Hay Sadaa e jaras e Naaqa e LAILA

Sad Haif Keh MANJUN Ka Qadam Uth Nahen Sakta

Jun Dana e Roida e Tah e Sang Hamaara

Sar Zer e Giraanbaar e Alam Uth Nahen Sakta

har Daagh e Maaasi Mira Iss Daman e Tar Say

Jun Harf  Sar e Kaaghaz e Namm Uth Nahen Sakta

Itna Hun Tiri Taigh K aSarminda e Ehsaan

Sar mera Tiray Sar Ki Qasam Uth Nahen Sakta

Parda Dar e Kaaba Say  Uthaana To Hay Aasaan

Par Parda e Rukhsaar e Sanam Uth Nahen Sakta

Kiun Itna Giraanbaar Hay Jo Rakht e Safar Say

Ay Raah e Rah e Mulk e Adam Uth Nahen Sakta

Dunya ka Zar o Maal Kia Jamaa To kaya ZAUQ

Kuch Faaida Be Dast e Karam Uth Nahen Sakta

Poet: Ibrahim Zauq

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -