نرم انفراسٹرکچر پر توجہ دیں

نرم انفراسٹرکچر پر توجہ دیں
نرم انفراسٹرکچر پر توجہ دیں

  

پاکستان کے عوام کا اس ملک کے مستقبل کا فیصلہ کرنے کے لئے پورا اور زیادہ حصہ ہونا چاۂیے کیونکہ وہ سب سے بڑے اسٹیک ہولڈر ہیں۔ ملک،موجودہ کاروبار کو بڑھانے کے لئے ایک حیرت انگیز منڈی ہے اور ابھرتے ہوئے تاجروں کی صلاحیتوں کے لئے اپنے اور پاکستان کے وسائل کو ایک ساتھ بڑھانے کے لئے بہت زیادہ مواقع ہیں۔ ہمیں دو اہم شعبوں، سخت اور نرم انفراسٹرکچر کی پالیسی سازی پر توجہ دینے اور ان میں انقلاب لانے کی ضرورت ہے۔ نرم انفراسٹرکچر کی اصطلاح کا بنیادی طور پر مطلب یہ ہے کہ اداروں کی تنظیم نو کی جائے ملازمین کی جدید تربیت اور تنظیم نو ہو اور ان میں مثبت تبدیلی لانے، رہنمائی کرنے کے لئے ایک نئی قیادت کی ضرورت ہے جو اتنی اہل ہو اور اس میں غیر معمولی قائدانہ خصوصیات اور خوبیاں ہوں۔ رہنماؤں کی بہت ساری خصوصیات ہیں لیکن یہاں ہمیں ایک مستند، ذمہ دار اور قابل قائد کی ضرورت ہے جو جانتا ہو کہ وہ کسی مثبت تبدیلی کا ذریعہ بن سکتا ہے۔ ایک اچھے رہنما کا انتخاب یا تقرری ایک اہم سوال ہے۔ یہ تب ہی انجام پاسکتا ہے جب گورنروں کا انتخاب باضمیر، غیر جانبدارانہ ووٹنگ کے طریقہ کار کے ذریعے کیا جائے۔ بہت قابل اور پرجوش افراد موجود ہیں جو فرق پیدا کرسکتے ہیں اور مہارت کے ساتھ موجودہ بحران سے نپٹ سکتے ہیں، نیز مؤثر طریقے سے ایک تنظیمی انقلاب کا سبب بن سکتے ہیں لیکن سیاسی کشمکش اور اختلافات کی وجہ سے انھیں اس طرح کے کام کے لئے آمادہ کرنا مشکل ہے۔

موجودہ حکومت نے نااہل مشیر خزانہ کی تقرری کرکے اس قوم کو ناقابل تلافی نقصان پہنچایا ہے جو بری طرح ناکام ہوچکا ہے اور اس نے ہماری معیشت کا ستیاناس کیا ہے۔ موجودہ وفاقی کابینہ میں مختلف کارٹیلز کے بہت سے نمائندے موجود ہیں۔ وہ قوم اور ملک کے لئے سب سے بڑا خطرہ ہیں۔ یہ وہی لوگ ہیں جو اداروں کو ٹھیک سے کام نہیں کرنے دے رہے، کیونکہ کارٹیلز زیادہ تر سرکاری اداروں پر نگاہ رکھے ہوتے ہیں کہ ان کی نجکاری کی جائے گی اور وہی ہیں جو انہیں خریدنا چاہتے ہیں۔ کارٹیل پہلے ہی متعدد سرکاری اداروں کے حصص خرید چکے ہیں اور باقاعدگی سے خرید رہے ہیں۔ وفاقی کابینہ کے اراکین وہی نہیں ہیں جو ان کی نمائندگی کررہے ہیں حقیقت میں وہ مافیا کی طرح کام کرتے ہیں اور بیوروکریٹک اسٹیبلشمنٹ میں اپنے نمائندے رکھتے ہیں۔

یہ کہنے کی ضرورت نہیں اور اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ ہمارے پاس اہل افراد موجود نہیں ہیں لیکن ہمیں ان دیانتدار اور اہل افراد کی تلاش کرنی ہوگی جو اپنے ذاتی مفادات ایک طرف رکھتے ہوئے دیئے گئے اہداف کو حاصل کرکے انجام دے سکتے ہیں۔ کارٹلوں اور مافیاز کا اثر و رسوخ ریاست سے زیادہ مضبوط اور بڑا ہو گیا ہے۔ یہ تب ہی نہیں ہوسکتا جب کارٹیل اور مافیا کو ان کے سائز میں کاٹ دیا جائے۔ بہت سے فورمز پر یا تو ایمانداری یا قابلیت کی بحث ہے۔ میں کہتا ہوں کہ ہمیں دونوں کی ضرورت ہے لیکن سوال یہاں پاکستان کی بقا کا ہے ہم اس پوزیشن میں نہیں ہیں ایماندار نااہل افراد کو قوم کی قسمت پر تجربہ حاصل کرنے کی کوشش کرنے دیں۔ ہمیں ایسے ذمہ دار رہنماؤں کی ضرورت ہے جو ریاست کے مختلف سطحوں پر بحرانوں اور سرکاری ملکیت میں کام کرنے والے اداروں میں موجود بحرانوں کو نپٹانا جانتے ہوں۔ ہمارے یہاں موجودہ حکومت میں ہر طرح کے قائدین اور قیادت کا فقدان ہے جو آنے والے وقت میں تاریخ کے نشان ہوں گے۔

پاکستان آرمی اس وقت ملک کا واحد ادارہ ہے جو انتہائی نظم و ضبط، منظم اور مستقبل کے تمام کرداروں کے لئے اپنے قائدین تیار کرتا ہے۔ وہ افسروں کی بھرتی سے ہی قائدانہ تربیت، کوچنگ اور ترقی کا آغاز کرتے ہیں اور وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ افسر کام اور توانائی کی حامل صلاحیت کے مطابق ترقی کرتے ہیں، کئی سال تک خدمات انجام دینے کے بعد اس مخصوص عہدے پر ریٹائر ہوتا ہے۔ جہاں متعدد وجوہات کی بنا پر انھیں ترقی نہیں ملتی۔ قائدانہ صلاحیت والے افسران کی صلاحیت کا مشاہدہ اور ان کی نگرانی ہر مرحلے اور سطح پر کی جارہی ہے۔ فوج کے اندر بہت سے پلیٹ فارم ہیں جہاں مناسب تربیت دی جاتی ہے اور ہر سطح پر مختلف کاموں کے لئے قائدین تیار کیے جارہے ہیں۔ نیشنل ڈیفنس یونیورسٹی (این ڈی یو)، اسٹاف کالج کوئٹہ اور دیگر بہت سارے اسکولوں اور کالجوں میں فوج کے تمام افسران کے لئے رہنماؤں کی خصوصی تربیت پر ملک کے مختلف حصوں میں کام کیا جارہا ہے۔ مجھے خوشی ہے کہ وہ خاص کاموں کے لئے اپنے قائدین کی مسلسل تربیت اور ترقی کررہے ہیں۔ ہوسکتا ہے کہ وہ مخلص نہ ہوں لیکن چونکہ ایک ادارہ ان کی غلطیوں کا ادراک کر رہا ہے اور ان پر غور و فکر کر رہا ہے جو ان کے ڈکٹیٹروں نے مختلف اوقات میں کیں اور ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ ہم ملک میں مارشل لاء نہیں لگائیں گے۔ ان کا کردار ملک کو محفوظ رکھنے اور سیاسی امور میں شریک ہونے سے گریز کرنا ہے لیکن ملکی امور کی صورتحال اس طرح ہے کہ انہیں سیاسی امور میں مداخلت کرنا پڑی۔

سیاسی امور کو سنبھالنے اور سیاست میں حصہ لینے کے لئے ان کے لئے ملک میں پالیسی سازوں کو ایک نیا آئینی کردار طے کرنا پڑے گا۔

میں نے متعدد بار سرکاری اور عدالتی حکام کو یہ کہتے ہوئے سناکہ وہ غیر جانبدار ہیں۔ میں ان سے کہتا ہوں کہ ہر کوئی سیاسی ہے، ہر کوئی سیاست سنتا ہے، سیاست پر بحث کرتا ہے، سیاست پر دلیل دیتا ہے، سیاست پر تنقید کرنا یا تو یہ قومی مسئلہ ہے یا عالمی مسئلہ، جس سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ اس دنیا کے ہر فرد کی کوئی نہ کوئی سیاسی وابستگی ہے اور ہر ایک متعصب ہے آپ معاشرے کے جس بھی شعبے یا طبقے سے تعلق رکھتے ہیں، عدلیہ، بیوروکریسی، فوجی خدمات، نجی ملازمت یا جس شعبے کا بھی آپ انتخاب کرتے ہیں، ہم سب عام انتخابات میں ووٹ دیتے ہیں اور ہم میں یہی سیاست ہے اور اس سے ہمیں تعصب کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ سیاسی ہونے یا تعصب رکھنے میں کوئی مضائقہ نہیں ہے لیکن ہمیں یہ سمجھنا ہوگا کہ جب منصفانہ کھیل کی بات آتی ہے تو ہمیں اپنے تعصب کو ایک طرف رکھنا چاہئے اور ملک کی بھلائی کرنا چاہئے۔ جب فرد کو فرق پڑنے کا موقع ملتا ہے تو یہ اس شخص کی سالمیت، کردار اور اس کی عزت کی بات ہوتی ہے جس کا اثر آنے والے وقت میں رہتا ہے۔

مزید :

رائے -کالم -