دیکھ لو شوقِ نا تمام مرا| مومن خان مومن|

دیکھ لو شوقِ نا تمام مرا| مومن خان مومن|
دیکھ لو شوقِ نا تمام مرا| مومن خان مومن|

  

دیکھ لو شوقِ نا تمام مرا

غیر لے جائے ہے پیام مرا

دیکھنا کثرتِ بلا نوشی

کاسۂ آسماں ہے جام مرا

رتبہ افتادگی کا دیکھو ہے

عرش کے بھی پرے مقام مرا

ہو کے یوسف جو دل چراتے ہو

کون ہو جائے گا غلام مرا

تو نے رسوا کیا مجھے اب تک

کوئی بھی جانتا تھا نام مرا

بندگی کام آ رہی آخر

میں نہ کہتا تھا کیوں سلام مرا

زانوئے بت پہ جان دی دیکھا

مومنؔ انجام و اختتام مرا

شاعر: مومن خان مومن

(شعری مجموعہ: دیوانِ مومن؛مرتبہ،انوارالحسن،سالِ اشاعت،1971)

Dekh   Lo   Shaoq-e-Na  Tamaam   Mira

Ghair   Lay   Jaaey   Hay   Payaam   Mira

 Dekhna   Kasrat-e-Balaa   Noshi

Kaasa-e-Aasmaan   Hay   Jaam   Mira

 Rutbah   Uftaadgi   Ka   Dekho

Arsh   K   Bhi   Paray   Maqaam   Mira

 Ho    K   Yousaf    Jo   Dil   Churaatay   Ho

Kon   Ho   Jaaey   Ga   Ghulaam   Mira

 Tu   Nay   Ruswa   Kiya   Mujhay   Ab  Tak

Koi   Bhi   Jaanta   Tha   Naam   Mira

 Bandagi   Kaam   Aa   Rahi   Aakhir

Main   Na   Kehta   Tha   Kiun   Salaam   Mira

 Zaanoey-e-But   Pe   Jaan   Di   Daikha

MOMIN   Ajnaam-o-Ikhtataam   Mira

 Poet: Momin   Khan   Momin

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -