دیہی نوجوانوں پر سرمایہ کاری کی ضرورت

دیہی نوجوانوں پر سرمایہ کاری کی ضرورت
دیہی نوجوانوں پر سرمایہ کاری کی ضرورت

  

دنیا میں اس وقت یہ ایک عام رجحان ہے کہ نوجوانوں کی اکثریت اعلیٰ تعلیم کے حصول کے لیے شہروں کا رخ کرتی ہے اور بعد میں روزگار کی مصروفیات انہیں ایسے جکڑ لیتی ہےکہ اپنے آبائی دیہی علاقے سے اُن کا تعلق بس واجبی سے رہ جاتا ہے۔اس میں نوجوانوں کو بالکل بھی قصور وار نہیں ٹھہرایا جا سکتا ہے کیونکہ اعلیٰ تعلیم ، مناسب روزگار ،بہتر رہائش اور ایک معیاری طرز زندگی ہر شخص کی بنیادی خواہش ہے اور اسی کے لیے وہ جستجو بھی کرتا ہے۔یوں کہا جا سکتا ہے کہ ایک بہتر مستقبل کی تشکیل شہری نقل مکانی کے سب سے بڑے اسباب میں کلیدی عنصر ہے۔ تاہم اس رجحان کے کچھ مضمرات بھی ہیں جن میں شہروں کی حد سے زیادہ بڑھتی ہوئی آبادی ،محدود شہری سہولیات پر پڑنے والا اضافی بوجھ اور ساتھ ساتھ دیہی علاقوں میں زراعت سمیت دیگر روایتی صنعتوں پر مرتب ہونے والے منفی اثرات شامل ہیں۔ اس کے ساتھ ہی، نوجوان کارکنوں کی بڑھتی ہوئی کمی اور دیہی معیشتوں کی بحالی کے لیے اختراعی نقطہ نظر  بھی بہت اہم ہے ، جو یقیناً نوجوانوں کا ہی خاصہ ہے۔

اس ضمن میں سب سے "آئیڈیل" چیز تو یہی ہو سکتی ہے کہ ریاست دیہی علاقے میں ایسا نظام زندگی لائے جس میں بنیادی ضروریات زندگی وافر دستیاب ہوں اور نوجوانوں کو روزگار سمیت دیگر شعبہ جات میں آگے بڑھنے کے مناسب اور مساوی مواقع مل سکیں ، لیکن ایسا کرنے کے لیے وسائل کی دستیابی لازم ہے۔ اعداد و شمار کے مطابق ، اس وقت دنیا بھر میں پندرہ تا چوبیس سال کی عمر کے نوجوانوں کی تعداد 1.2 بلین سے زیادہ ہے اور ان میں سے ایک بلین ترقی پذیر ممالک میں رہتے ہیں ،جس سے دنیا کی ترقی میں نوجوان  افراد کی اہم شراکت کی عکاسی ہوتی ہے۔لیکن سوال یہی پیدا ہوتا ہے کہ قومی تعمیر و ترقی کے عمل میں نوجوانوں کی فعال عملی شرکت کو  کیسے یقینی بنایا جائے۔ ظاہر ہے کہ اس کے لیے نوجوانوں کےمستقبل پر  سرمایہ کاری لازمی ہے،اُن کے لیے تعلیم اور سماجی خدمات کو مضبوط بنانا ضروری ہے، اور انہیں ایسے افرادی سرمایے میں ڈھالنے کی ضرورت ہے جو معاشرے کا سب سے بڑا کارآمد گروہ کہلاتا ہے۔ نوجوانوں کی فلاح و بہبود اور استحکام کا مجموعی طور پر معاشرتی تبدیلیوں کے ساتھ گہرا تعلق ہے۔موجودہ صورتحال کی ہی بات کی جائے تو اقتصادی جمود، شدید موسمیاتی بحران اور جاری وبا کے تناظر میں اکثر نوجوان سب سے پہلے اپنی ملازمتوں سے محروم ہوئے ہیں۔ خاص طور پر، بہت سارے ترقی پذیر ممالک میں، نوجوان اکثر غیر متناسب طور پر بھاری بوجھ اٹھاتے ہیں اور انہیں اپنے خاندان کی کفالت کرنا ہوتی ہے۔ ایک نوجوان کو اکثر اپنے چھوٹے بچوں، بوڑھے والدین، اور یہاں تک کہ خاندان کے دیگر افراد کی بھی مدد کرنا پڑتی ہے۔ پھر ایسے ممالک میں نوجوانوں کی بے روزگاری ایک بڑا مسئلہ ہے، جو نہ صرف خود نوجوانوں کو متاثر کرتی ہے، بلکہ نسلوں پر بھی اس کا اثر پڑتا ہے۔

ترقی پزیر ممالک میں چین کی مثال بقیہ ممالک سے قدرے مختلف ہے کیونکہ چینی حکومت ایک طویل عرصے سے مختلف شعبہ ہائے زندگی بشمول دیہی امور میں نوجوانوں کی عملی شمولیت کو فروغ دینے کی ایک مضبوط حامی رہی ہے، جس کی عکاسی متعدد پالیسی دستاویزات سے ہوتی ہے۔چین کی جانب سے رواں سال کے آغاز میں نوجوانوں کے حوالے سے جاری کردہ وائٹ پیپر کے مطابق ، 2021 میں تقریباً 04 لاکھ 70 ہزار نوجوان ملک کی دیہی حیات کاری کی حکمت عملی کو نچلی سطح پر نافذ کرنے میں شامل رہے ہیں۔ یہ نوجوان دیہات میں تعلیم، زراعت ، صحت کی دیکھ بھال اور دیگر شعبوں میں اپنا حصہ ڈال رہے ہیں۔ لاکھوں نوجوان طلباء نے غربت کے خاتمے اور پائیدار زرعی ترقی کو آگے بڑھانے سمیت دیہی سماجی سرگرمیوں میں حصہ لیا ہے۔تعلیم یافتہ نوجوانوں نے دیہی باسیوں کی آمدنی اور معیار زندگی کو فروغ دینے میں مدد کی خاطر ڈیجیٹلائزیشن، نئے کاروباری ماڈلز اور جدید مارکیٹنگ اور ویلیو چین کنیکٹیویٹی جیسے جدید طریقے اپنائے ہیں۔ ایسی سرگرمیوں نے جہاں روزگار کے مواقع پیدا کیے وہاں جدید زراعت کی بدولت غذائی تحفظ کو بھی مضبوط کیا ہے۔ چینی حکام کو بخوبی ادراک ہے کہ نوجوانوں کو دیہی علاقوں میں واپس آنے کی ترغیب دینا ، ملک کی دیہی حیات کاری کی پالیسی کا ایک لازمی جزو ہے کیونکہ یہی نوجوان اپنی پچھلی نسلوں کے حقیقی ترجمان ہیں۔اس ضمن میں چینی پالیسی ساز بخوبی آگاہ ہیں کہ  نوجوان نئی مہارتیں حاصل کر سکتے ہیں، پچھلی نسلوں کے مقابلے میں بہتر تعلیم یافتہ ہوتے ہیں، اور دیہی علاقوں کی ترقی کو جدید خطوط پر استوار کرنے کا جذبہ بھی رکھتے ہیں ،صرف ان کی ذہن سازی اور لازمی وسائل فراہم  کرنے کی ضرورت ہے۔

اس تناظر میں اگر چین کے عملی اقدامات کا مختصر جائزہ لیا جائے تو  دیہی علاقوں میں نوجوانوں کے لیے تعلیم کے مواقع کو مسلسل بہتر بنایا جا رہا ہے تاکہ انہیں تعلیم اور پیشہ ورانہ تربیت حاصل کرنے کے لیے شہروں کی جانب ہجرت کرنے کی ضرورت نہ پڑے۔ دوسرا، نوجوانوں کے لیے پرکشش کیریئر کے امکانات اور معقول اجرت کو فروغ دیا جا رہا ہے تاکہ وہ اپنی اور اپنے اہل خانہ کی زندگی کو بہتر بنا سکیں۔ تیسرا، دیہی علاقوں میں سماجی خدمات کو بہتر اور وسیع بنایا جا رہا ہے۔چوتھا اور اہم ترین پہلو،ایسے دیہی نوجوان جو چھوٹے کاروبار شروع کرنے کے خواہشمند ہیں انہیں مالیاتی خدمات تک رسائی دی جا رہی ہے اور پائیدار سرمایہ کاری کے طریقوں میں رہنمائی بھی جاری ہے۔ یوں نوجوانوں کو  ایسے وسائل فراہم کرنے کی ہر ممکن کوششیں جاری ہیں جن سے دیہی علاقوں کی ترقی میں اُن کی صلاحیتوں سے بھرپور استفادہ کیا جا سکے اور انہیں ملک و قوم کا کارآمد فرد بنایا جا سکے۔ 

۔

 نوٹ:یہ بلاگر کا ذاتی نقطۂ نظر ہے جس سے ادارے کا متفق ہونا ضروری نہیں۔

 ۔

 اگرآپ بھی ڈیلی پاکستان کیلئے بلاگ لکھنا چاہتے ہیں تو اپنی تحاریر ای میل ایڈریس ’zubair@dailypakistan.com.pk‘ یا واٹس ایپ "03009194327" پر بھیج دیں۔

مزید :

بلاگ -