منہ پہ رکھنے لگے نقاب بہت | میرمہدی مجروح |

منہ پہ رکھنے لگے نقاب بہت | میرمہدی مجروح |
منہ پہ رکھنے لگے نقاب بہت | میرمہدی مجروح |

  

منہ پہ رکھنے لگے نقاب بہت

آج کل بڑھ گیا حجاب بہت

جان بچتی نظر نہیں آتی

آج ہے دل کو اضطراب بہت

کیوں نہ گھبرائیں آہِ سوزاں سے

ہے گل رُخ پہ آب و تاب بہت

دوست گنتے ہو غیر کو اپنا

ہے غلط آپ کا حساب بہت

جان و دل کو کباب کر ڈالا

گرم ہے آہِ شعلہ تاب بہت

دہشتِ قبر ہے اگر اے دل

درد رکھ نام بوتراب بہت

صبح بے ہوش تھے پڑے مجروحؔ

پی گئے رات کو شراب بہت

شاعر: میر مہدی مجروح

(شعری مجموعہ: دیوانِ مجروح؛سالِ اشاعت،1889)

Munh   Pe   Rakhnay   Lagay   Naqaab   Bahut

Aaj   Kal   Barrh   Gaya   Hijaab   Bahut

 Jaan   Bachti   Nazar   Nahen   Aati

Aaaj  Hay   Dil   Ko   Iztaraab   Bahut

 Kiun   Na   Ghabraaen    Aah-e-Sozaan   Say

Hay   Gul   Rukh   Pe   Aab-o-Taab   Bahut

 Dost   Gintay   Ho   Ghair   Ko   Apna

Hay    Ghalat   Aap   Ka   Hisaab   Bahut

 Jaan-o-Dil   Ko   Kabaab   Kar   Daala

Garm   Hay   Aah-e-Shola   Taab   Bahut

 Dehshat-e-Qabr   Hay   Agar   Ay   Dil

Dard   Rakh   Naam   Buturaab   Bahut

 Subh   Behosh   Thay    Parray   MAJROOH

Pi    Gaey    Raat   Ko   Sharaab   Bahut

 Poet: Meer   Mehdi   Majrooh

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -مزاحیہ شاعری -